NEWS

کراچی ،31 مئی2017

 

کراچی کی تعمیر و ترقی کے لئے 200 ارب روپے کے خصوصی پیکج کا مطالبہ، ڈاکٹر صغیر احمد سینئر وائس چیئر مین
کراچی کیلئے 200ارب اور سندھ کے دیگر شہرحیدرآباد کے لئے50 ارب میرپور خاص نواب شاہ، سکھر کی تعمیر و ترقی 
کے لئے25، 25 ارب روپے خصوصی پیکچ کا مطالبہ کردیا۔
وفاقی اور صوبائی حکومت 100، 100 ارب کے خصوصی پیکج کے اعلان کرکے کراچی سمیت اندرون سندھ 
کے عوام کی محرومیوں کا ازالہ کریں،ڈاکٹر صغیراحمد 
ماہ رمضان کے آغازسے غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کے نام پر کراچی کی عوام کو شدید کرب میں مبتلا کردیا گیا ہے
کے الیکٹرک کے CEO کے خلاف ایف آئی آر کاٹ کر شہریوں کے کو انکا لوٹا ہوا پیسہ واپس دلایاجائے۔ 
سندھ ہائی کورٹ کا کے الیکٹرک کے حوالے سے فیصلہ خوش آئند ہے،۔ڈاکٹرصغیر احمد
پی ایس ڈی پی کے 1000 ارب میں سے 25 بلین کراچی کیلئے مختص کیا گیا
،کراچی وفاق کو 70 اور صوبے کا 93 فیصد ریونیو کما کر دیتا ہے
کراچی سمیت اندورن سندھ کے دیگر شہروں میں اگر پانی بجلی نہیں ہے تو پاک سرزمین پارٹی ان کیلئے بھی آواز بلند کر رہی ہے

پاک سر زمین پارٹی کے سینئر وائس چیئرمین ڈاکٹر صغیراحمد نے کراچی کی تعمیر و ترقی کے لئے 200 ارب روپے کے خصوصی پیکج کا اور حیدرآباد کے لئے50 ارب اور میرپور خاص249 نواب شاہ، سکھر کی تعمیر و ترقی کے لئے25، 25 ارب روپے،کراچی منی پاکستان ہے اور ملک کی آبادی کا 10 فیصد ہے لہذا وفاق NFC کے فارمولے کے تحت پی ایس ڈی پی سے 100 ارب روپے،کراچی منی پاکستان ہے اور ملک کی آبادی کا 10 فیصد ہے لہذا وفاق NFC کے فارمولے کے تحت پی ایس ڈی پی سے 100 ارب روپے کے خصوصی پیکج کا مطالبہ کر تے ہیں،گزشتہ 9 برسوں سے کراچی کو مسلسل نظر انداز کیا گیا ہے امید کرتے ہیں کہ وفاقی اور صوبائی حکومت 100، 100 ارب کے خصوصی پیکج کے اعلان کرکے کراچی کے لوگوں کی محرومیوں کا ازالہ کریں اورسندھ کا بالعموم اور کراچی کا بالخصوص انفرااسٹرکچر تباہ ہو چکا ہے جس پرخصوصی توجہ اور ترقیاتی پیکج کی ہنگامی بنیادوں پر اشد ضرورت ہے،کراچی سمیت سندھ بھر کیلئے رمضان پیکیج کا اعلان کرکے عوام کو ریلیف مہیا کیاجائے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے کراچی پریس کلب پر پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیاانہوں نے کہاکہ ماہ صیام کے آغاز سے ہی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کے نام پر کراچی کی عوام کو کرب میں مبتلا کردیا گیا ہے انہوں نے کہاکہ کل شہرِ کراچی میں عوام سہروافطار میں بجلی کے نہ ہونے پر سڑکوں پر پریشانی کے عالم میں احتجاج کرتے ہوئے نظر آئے ہیں کے الیکٹرک کے CEO کے خلاف ایف آئی آر کاٹ کر میرے شہر کے باسیوں کو انکا لوٹا ہوا پیسہ لوٹایا جائے انہون نے کہاکہ وفاق کی طرف سے دیئے گئے کسی بھی رمضان پیکچ سے کراچی اور سندھ محروم ہے لہذا کراچی کو اُس کی آبادی کی بنیاد پر پیکچ کا اعلان کیا جائے، کراچی جیسا بڑا شہر ٹرانسپورٹ کی بنیادی انفرااسٹرکچر سے محروم ہے اس طرف سنجیدگی سے فیصلے لینے کی اشد ضرورت ہے اورہمارے ایسے کوئی عزائم نہیں ہیں کے کسی کی گورنمنٹ کو گرایا جائے ہم صرف لوگوں کو ان کے بنیادی حقوق کے حصول کے لئے آواز اٹھا رہے ہیں۔انہوں نے کہاکہ پی ایس ڈی پی کے 1000 ارب میں سے 25 بلین کراچی کیلئے مختص کیا گیا،کراچی وفاق کو 70 اور صوبے کا 93 فیصد کما کر دیتا ہے اور وزیر اعظم پاکستان ملک کے دیگر صوبوں میں منصوبوں کے افتتاح کرتے نظر آتے ہیں،2.5 کروڑ آبادی والے شہر کیلے 100 ارب روپے کے پیکج کا اعلان کیا جائے اوروزیر اعظم نواز شریف کراچی سمیت سندھ کے تمام شہروں کیلے خصوصی پیکیج کا اعلان کریں انہون نے کہاکہ کل رات عوام کراچی کی سڑکوں پر احتجاج کرتے نظر آئے، لیکن کوئی سنوائی نہیں ہوئی بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ اور لائین فالٹس کو فوری طور پر درست کیا جائے،بجلی کی بندش کی وجہ سے پانی اور گیس کی بندش کی وجے عوامی دہرے عذاب میں مبتلا ہوگئے اورجیکب آباد، دادو اور دیگر شہروں میں اگر پانی بجلی نہیں ہے تو پاک سرزمین پارٹی ان کی آواز بلند کر رہی ہے انہوں نے کہاکہ کے فور فیز 2 کا فوری اعلان کیا جائے،1200 کیوسک پانی کو سسٹم میں شامل کیا جائے،مانز ٹرانزٹ ٹرانسپورٹ منصوبوں کو فوری طور مکمل کیا جائے،سرکلر ریلوے منصوبہ کو عوام کے وسیع تر مفاد میں ہنگامی بنیادوں پر شروع کیا جائے انہون نے کہاکہ پاک سرزمین پارٹی اپنا احتجاج جاری رکھے گی اور مسائل اور ان کے حل کیلئے آواز بلندی کرتی رہے گی اورسندھ ہائی کورٹ کا کے الیکٹرک کے حوالے سے فیصلہ خوش آئند ہے انہون نے کہاکہ سرکاری ملازمتوں میں میرٹ کا خصوصی خیال رکھا جائے تاکہ پڑھے لکھے قابل افراد ملک کی تعمیر و ترقی میں اپنا کردار ادا کرسکیں۔ 

 

کراچی ،30 مئی2017

حکومت سندھ نے پورے سندھ بالخصوص کراچی کو کچرے کے، ڈھیر میں تبدیل کر دیا ہے. ترجمان پاک سر زمین پار ٹی
تمیراتی کام کا معیار انتہائی ناقص ہے
 سندھ حکومت ہو یا بلدیاتی ادراے کرپشن نے کراچی سمیت پورے سندھ کو تباہ کر دیا
پیپلزپارٹی 9 سال حکومت کرنے کے بعد پورے سندھ میں ایک مثالی شہر یا گاوُں نہیں بنا سکی

پاک سر زمین پار ٹی کے ترجمان نے پاکستان ہاؤس سے جاری اپنے بیان میں کہا ہے کہ حکومت سندھ نے پورے سندھ بالخصوص کراچی کو کچرے کے ڈھیر میں تبدیل کر دیا ہے. رمضان المبارک کے مہینے میں حکومت کو ہنگامی بنیادوں پر صفائی کے اقدامات کرنے کی ضرورت ہے تاکہ اس ماہ مقدس میں لوگوں کو عبادات میں مشکلات کا سامنا کم سیکم ہو، جگہ جگہ علاقوں میں گٹر ابل رہے ہیں، کئی سڑکوں پر پانی جمع ہے، گلیاں کئی ماہ سے کھدی ہوئی ہیں لیکن حکومت سندھ اس جانب کوئی توجہ نہیں دے رہی نہ ہی مسائل کے حل کے لیے کوئی عملی اقدامات کر رہی ہے جو عوام کے لئے انتہائی تشویش کا باعث ہے.انہوں نے کہا کہ تعمیراتی کام کا معیار انتہائی ناقص ہے اور سرکاری وسائل کو عوام کے دیےُ ہوے ٹیکس کا پیسہ کرپشن کی نظر ہورہا ہے

کراچی ،29 مئی2017

رمضان کی آمد کیساتھ اشیا خوردونوش میں ہوشربا اضافہ پر گہری تشویش ۔ رضا ہارون

پاک سرزمین پارٹی کے سیکریٹری جنرل رضاہارون نے. رمضان کی آمد کے ساتھ اشیاء خوردونوش کی قیمتوں میں ہوشربااضافہ پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئیاسے عوام کے ساتھ ظلم قرار دیاہیذاپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ انہوں نے رمضان کا مقدس مہینہ عبادت کی بجائے دکانداروں کے لئے منافع کا مہینہ بن گیا ہے۔جس کی وجہ سے عوام کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے. انہوں نے کہاکہ رمضان کے دوران دنیا بھر اورمسلم ممالک میں اشیاء خوردونوش کی قیمتیں کم کر دی جاتی ہیں لیکن پاکستان میں رمضان کی آمد کے ساتھ قیمتوں میں اضافے کر دیا جاتا جو کہ انتہائی افسوس ناک بات ہے۔انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت و بلدیاتی ادارے اورپرائس کنٹرول کمیٹی مکمل طور پہ ناکام ہوچکے ہیں بلکہ قیمتوں اضافہ سرکاری سرپرستی کے بغیر ناممکن ہے .انہوں نے کہا کہ اس ظلم سے نجات کے لےُ لوگوں کھڑا ہونا ہوگا ملک سے کرپٹ حکمرانوں سے نجات کے لےُ لوگوں کو آواز لگانی ہوگی

 

سحر و افطار کے اوقات میں غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ  کے الیکٹرک کی کراچی کے ساتھ دشمنی کے مترادف ہیں وسیم آفتاب وائس چیئرمین
عدلیہ و وزیراعظم کراچی کے 100 ارب سے ذیادہ لوٹنے کےالیکٹرک سے کراچی کی عوام کو نجات دلائیں

پاک سرزمین پارٹی کے وائس چیئرمین وسیم آفتاب نیرمضان المبارک کے مہینے میں کراچی سمیت ملک بھر کے بیشتر شہروں میں کی جانے والی لوڈشیڈنگ کی سخت ترین الفاظ میں مذمت کی ہے۔ ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ رمضان کے مقدس مہینے میں سحری، افطار اور تراویح کے اوقات پر بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ حکومتی نااہلی اورانتظامیہ کی غفلت ہیانہوں نے کہا ہے کہ پاکستان کے میگا سٹی کراچی سمیت ملک بھر کی عوام بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کے عذاب میں مبتلا ہے، k الیکٹرک کی ناقص کارکردگی کی وجہ سے عوام میں اشتعال پایا جارہا ہے اور ان کی روزمرہ کی زندگی کے معاملات شدید متاثر ہورہے ہیں بالخصوص رمضان المبارک میں سحر و افطار کے اوقات میں غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ عوام کے ساتھ دشمنی کے مترادف ہیں. انہوں نے عدلیہ سمیت وزیراعظم اور دیگر متعلقہ اداروں کے سربراہان سے بھی مطالبہ کیا ہے کہ وہ رمضان المبارک میں بجلی کی لوڈشیڈنگ کا نوٹس لیں اور عوام کو ریلیف فراہم کریں. اورکراچی کے 100 ارب سے ذیادہ لوٹنے K الیکٹرک سے کراچی کی عوام کو نجات دلائیں

کراچی ،27 مئی2017

بجٹ ۱۸۔۲۰۱۷ حکومتی جماعت کا الیکشن بجٹ ہے ۔مصطفی کمال چیئر مین پی ایس پی
حکومت اپنے انتخابی احداف پورے کرنے میں ناکام رہی ، مصطفی کمال
PSDPکے ترقیاتی بجٹ میں کراچی شہر کا آبادی کے حساب سے دس فیصد حصہ مختص ہونا چاہئے تھا
عوام پر بلواسطہ ٹیکس کا بوجھ کم کرنے کے بجائے بڑھا دیا گیا ہے، مصطفی کمال

کراچی( ) پاک سرزمین پارٹی کے چیئرمین سید مصطفی کمال نے بجٹ 2017-18کوحکمراں جماعت کا الیکشن بجٹ قرار دیا۔ انہوں نے کہاکہ حکومتی جماعت نے 2013کے انتخابات میں عوام سے وعدہ کیا تھا کہ وہ بجلی کی پیدوار میں اضافہ کر کہ لوڈ شیڈنگ کا خاتمہ کرے گی، پرائیوٹائزیشن میں بہتری لائے گی ، سبسڈی میں بتدریج کمی لائے گی، برآمدات میں اضافہ کر کے تجارتی خسارے کو کم کرے گی، روزگار کے مواقع پیدا کرے گی اور گردشی قرضے ختم کرے گی ، لیکن ان تمام احداف کو پانے میں حکومت ناکام دکھائی دیتی ہے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کی جانب سے ترسیلات زرمیں کمی آئی ہے جو تشویشنا ک ہے۔ روایتی بجٹ کی طرح اس بار بھی براہ راست ٹیکس ادا کرنے والے لوگوں پر مزید ٹیکسز کا بوجھ ڈال دیا گیا ہے، عوام پر indirect ٹیکس کا بوجھ کم کرنے کے بجائے بڑھا دیا گیا ہے اور ٹیکس نیٹ کو بڑھانے کی کوشش نہیں کی گئی ۔

انہوں نے وفاقی حکومت کی توجہ مبذول کراتے ہوئے کہا کہ کراچی پاکستان کی معاشی شہہ رگ اورکل آبادی کا 10فیصد ہے لہذا اس تناسب سے PSDPکے ترقیاتی بجٹ میں کراچی کی ترقیاتی اسکیموں کیلئے ایک ہزار بلین روپے کا کم از کم ایک سو بلین مختص کیا جانا چاہیئے تھا لیکن ہمیشہ کی طرح کراچی کو ایک بار پھر نظرانداز کیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کے عوام امید کر رہے تھے کہ حکومت اپنے آخری بجٹ میں عوام کو ریلیف فراہم کرے گی لیکن انہیں شدید مایوسی کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

کراچی ،27 مئی2017

اسلام آباد ڈی چوک پر کسان اتحاد کے پرامن احتجاج پر شیلنگ و لاٹھی چارج کرنے پر رضاہارون کا اظہار مذمت
اپنے جائز حقوق کی جدوجہد کیلئے کسان اتحاد کے پرامن مظاہرین پر حکومت کی جانب سے غیر قانونی و غیر آئینی اقدام انتہائی افسوس ناک ہے

پاک سرزمین پارٹی کے سیکریٹری جنرل رضاہارون نے اسلام آباد ڈی چوک پر کسان اتحاد کے پرامن احتجاج پر شیلنگ و لاٹھی چارج کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے، پاکستان ہاؤس سے جاری اپنے بیان میں انہوں نے کہا ہے کہ اپنے جائز حقوق کی جدوجہد کیلئے کسان اتحاد کے پرامن مظاہرین پر حکومت کی جانب سے غیر قانونی و غیر آئینی اقدام انتہائی افسوس ناک ہے ڈی چوک اسلام آباد پر کسان اتحاد باردانے کے معاملے اور پٹورایوں کے جبر و ظلم کے خلاف اپنا احتجاج ریکارڈ کروارہے تھے، انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت کی کسان دشمن پالیسیوں پر سندھ کی صوبائی حکومت کے سینئر رہنما خورشید شاہ کی مذمت کی تائید کرتے ہیں لیکن پیپلز پارٹی کا دوہرا معیار بھی کسی سے ڈھکا چھپا نہیں رہا، کسان اتحاد پر پر زور الفاظ میں مذمت کرنے والے اپنے ہی صوبے کے سب سے بڑے شہر کراچی کے بے بس، لاچار اور پریشان حال عوام کو اپنے حقوق کیلئے آواز اٹھانے پر اسے طاقت سے دبانے کیلئے ایسا ظالمانہ اور وحشیانہ اقدام اٹھاچکی ہے، انہوں نے کہا کہ ریڈ زون سے دور اپنے بنیادی حقوق کیلئے احتجاج کرنے والے پر امن و نہتے خواتین، بچوں، بزرگوں اور نوجوان شہریوں پر بغیر کسی وجہ اور ریڈ زون کی خلاف ورزی نہ کرنے کے باوجود سندھ حکومت نے ان پر شیلنگ، لاٹھی چارج اور واٹر کینن کا استعمال کرکے اپنی وڈیرانہ سوچ ظاہر کردی، انہوں نے کہا کہ پاک سرزمین پارٹی اس مشکل وقت کسانوں کے ساتھ کھڑی ہے اور ان کے جائز مطالبات کیلئے ہرفورم پر آواز اٹھائے گیکسان ہماری معیشت کو بہتر کرنے کے لیے دن رات محنت کرتے ہیں اور حکمران ایوانوں پر بیٹھے کر عوام کے ٹیکس پر پروٹوکول اور آسائشیں انجوائے کرتے ہیں

کراچی ،27 مئی2017

ہمارے16 مطالبات کراچی کے روشن مستقبل کی ضمانت ہیں، مصطفی کمال
ظالم حکمرانوں سے اپنے بنیادی حقوق حاصل کرنے کی اس جدوجہد میں پاک سرزمین پارٹی کاساتھ دینا ہوگا
چوک اور شاہ فیصل ٹاؤن کا اچانک دورہ کے موقع پر گفتگو

چیئرمین پی ایس پی سید مصطفی کمال نے کہا کہ ہمارے16 مطالبات کراچی کے روشن مستقبل کی ضمانت ہیں، ان مطالبات پر کسی قسم کے سمجھوتے کی گنجائش نہیں ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے مکا چوک اور شاہ فیصل ٹاؤن کا اچانک دورہ کے موقع پر گفتگوکرتے ہوئے کیا. اس موقع پر علاقہ مکین اور کارکنان کی بڑی تعداد نے اپنے قائد کا استقبال بھرپور نعروں اور گل پاشی سے کیا ۔انہوں نے کہا کہ پاک سرزمین کی جدوجہد کابنیادی مقصد اپنی آئندہ نسلوں کو بہتر مستقبل دینا ھے انہوں نے کہا کہ آج مکا چوک اورشاہ فیصل ٹاؤن پر عوام کا ہجوم دیکھ کر ان ظالم اور جابر حکمرانوں کی نیندیں حرام ہوچکی ہیں اب بھی وقت ہے حکمرانوں تم ان مظلوم عوام کو ان کے بنیادی حقوق دیدو ورنہ ہمارا احتجاج گلی گلی میں پھیل جائیگا انہوں نے کہا کہ ماک چوک اورشاہ فیصل کے لوگوں تیاری کرو ظالم حکمرانوں سے اپنے بنیادی حقوق حاصل کرنے کی اس جدوجہد میں پاک سرزمین پارٹی کاساتھ دینا ہوگا

کراچی ،25 مئی2017

کراچی ،25 مئی2017

MUSTAFA KAMAL WELCOMES THE PRIME MINISTER AND FEDERAL GOVERNMENT FOR FULLY COVERING ITS SHARE FOR K-IV GREATER KARACHI WATER SUPPLY SCHEME FOR 2017-18

 
Chairman PSP Mustafa Kamal has welcomed the news reports where the Federal Government has allocated much needed funds in upcoming budget 2017-18 for Karachi mega projects in general and fully covering its remaining federal share of Rs 9.6 billion towards the “Greater Karachi Water Supply Scheme K-IV”.  He dedicated this good news to the relentless and untiring efforts of Pak Sarzameen Party (PSP), its leadership and the people of Karachi for raising awareness about the civic issues faced by the Karachiites through PSP 16-Point Charter of Demands. Our peaceful protest sit-in outside Karachi Press Club from 6-23 April 2017 and the peaceful protest rally of 14 May 2017 highlighted the plight of the people of Karachi. Mr Kamal praised the Prime Minister Nawaz Sharif and his Federal Cabinet for taking notice of PSP Demands and addressing the grievances of general public. He criticised the muted efforts of Sindh Government and their lack of interest towards K-IV and S-III. Now the Sindh Government is left with no excuse or justification but to complete the Phase-1 of K-IV project.
 
Mr Kamal stressed that due to the delay of ten years for K-IV Phase-1, there is an acute short fall of water supply for Karachi city today. Currently Karachi receives 550MGD and with the completion of K-IV Phase-1 another 260MGD will be added as a result, however, the water supply need for Karachi has gone up today to 1240MGD. And moreover, by the time K-IV Phase -1 will be completed the requirement will go up to 1500MGD thus a further increase in the shortfall.  Therefore, it is absolutely essential for the Karachi that an urgent attention and much needed commitment is demonstrated through allocation of initial funding for the Phase-2 of K-IV Water Supply Scheme to commence the planning and development without further delay. He stressed upon similar urgency and immediate need towards allocation of sizeable funds in the current budge for S-III, the Greater Karachi Sewerage Plant.

 

کراچی ،24 مئی2017

پاک سرزمین پارٹی کے چیئر مین سید مصطفی کمال کا دیگر ذمہ داران کے ہمراہ سیفی کالج ناظم آباد کادوہ 
پاکستان کا مستقبل آپ لوگوں کے ہاتھ میں ہے کیونکہ وہ ملک کبھی ترقی نہیں کر سکتا جہاں کے نوجوان تعلیم سے دور ہوں، مصطفی کمال
ہمیں سب کو چاہیے کہ تعلیم کو اپنا زیور بنائیں اور ملک کے روشن مسقتبل کے لئے جدو جہد کریں،

پاک سرزمین پارٹی کے چیئر مین سید مصطفی کمال نے دیگر ذمہ داران کے ہمراہ سیفی کالج ناظم آباد کادوہ کیا اورسیفی کالج کے پرنسپل اورنگزیب ناپڑا اور طالب علموں سے ملاقاتیں کیں اس مو قع پر طلبا ء سے خطا کر تے ہوئے سید مصطفی کمال نے کہاکہ پاکستان کا مستقبل آپ لوگوں کے ہاتھ میں ہے کیونکہ وہ ملک کبھی ترقی نہیں کر سکتا جہاں کے نوجوان تعلیم سے دور ہوں لہذا ہمیں سب کو چاہیے کہ تعلیم کو اپنا زیور بنائیں اور ملک کے روشن مسقتبل کے لئے جدو جہد کریں ۔ انہوں نے کہاکہ ہم چاہتے ہیں کہ پاکستان میں تمام قومیتوں، مذاہب ،مسالک اورلسانیت کی بنیاد پر لوگ ایک دوسرے سے نفرت نہ کریں بلکہ اختلافات کودور کرکے آپس میں ایک دوسرے سے محبت کو فروغ دیں۔ انہوں نے کہاکہ ہدایت کی طاقت اللہ ک پاس ہے، ہم اپنے حصے کی جدوجہد کررہے ہیں اورہمارا عمل عوام کے سامنے ہے انسانیت کی خدمت سب سے زیادہ عظیم ہے ،انہوں نے کہاکہ پانامہ اور ڈان لیکس کے باوجودآج پاکستان کی تمام جماعتیں کراچی کے مسائل پر پی ایس پی کی وجہ سے بات کررہی ہیں۔انہوں نے کہاکہ مصطفی کمال پر الزامات لگائے گئے، حملے کروائے گئے لیکن آج وہی لوگ ہمارا استقبال کرتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ بلدیہ اورنگی اور دیگر علاقوں میں کئی دنوں کے بعد پانی صرف چند گھنٹوں کے لئے پانی آتا ہے ، اسپتالوں کی حالت زار اور بھی تشویشناک ہے ۔ انہوں نے مزید کہاکہ ہمارے احتجاج کی وجہ سے نظامت کے 7 سال بعد نیب کا لیٹر موصول ہوا ہے لیکن دنیا جانتی ہے کہ ہم نے کوئی غلط کام نہیں کیا تھا اور ہم ان تمام امتحانات کا سامناکرنے کیلئے تیار ہیں اورکامیابی ہمارا مقدر ہوگی،

==================

مانچسٹر میں دہشتگردی کے واقعہ پر مصطفی کمال کا اظہار مذمت
بین الاقوامی برادری کو دہشتگردی اور اس کی ہر شکل اور سوچ کے خلاف مل کر لڑنے کی ضرورت ہے۔

پاک سرزمین پارٹی کے چیئر مین سید مصطفی کمال نے مانچسٹر میں دہشتگردی کے واقعہ کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہاکہ بین الاقوامی برادری کو دہشتگردی اور اس کی ہر شکل اور سوچ کے خلاف مل کر لڑنے کی ضرورت ہے.انہوں نے معصوم بے گناہ انسانی جانوں کے نقصان پر اظہارِ افسوس کیا اور زخمیوں کی جلدصحتیابی کی دعا کی. 

 

کراچی ،23 مئی2017

ملک کی تعمیر و ترقی کیلئے لسانی، مذہبی اور موروثی سیاست کے بجائے بنیادی مسائل حل کرنے کی   سیاست کی ضرورت ہے ، مصطفی کمال

ہم سیاست کو خدمت سمجھ کررہے ہیں اور لوگوں کے بنیادی حقوق  حاصل کرکے دم لیں گے 

عوام کو پاک سرزمین پارٹی کی جدوجہد میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینا ہوگا تنہا تبدیلی نہیں لا سکتا 

گزشتہ روز پی ایس پی کے تحت عوامی رابطہ مہم کے سلسلے میں سی ویو ایسوسی ایشن آف ریزیڈنٹس کی منعقد ہ تقریب کے شرکاء سے خطاب

پاک سر زمین پارٹی کے چیئر مین سید مصطفی کمال نے کہاکہ ملک کی تعمیر و ترقی کیلئے لسانی، مذہبی اور موروثی سیاست کے بجائے بنیادی  مسائل حل کرنے کی  سیاست کی ضرورت ہے جب ملک کی ترقی کی راہ پر گامزن ہو گا،ہم سیاست کو خدمت سمجھ کررہے ہیں اور لوگوں کے بنیادی حقوق کو حاصل کرکے دم لیں گے 
،عوام کو پاک سرزمین پارٹی کی جدوجہد میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینا ہوگا تنہا تبدیلی نہیں لا سکتا عوام کو خود اپنے مسائل کے حل کے لیے کھڑا ہونا ہوگااورکرپشن کے خلاف متحد ہو کر عوام پاکستان کو مسائل سے نکال سکتے ہیں۔ .ان خیالات اظہار انہوں نے گزشتہ روز پی ایس پی کے تحت عوامی رابطہ مہم کے سلسلے میں سی ویو ایسوسی ایشن آف ریزیڈنٹس کی منعقد ہ تقریب کے شرکاء سے خطاب کر تے ہوئے کیا۔اس مو قع پی ایس پی کے صدر انیس قائم خانی، سیکریٹری جنرل رضاہارون، دیگر ذمہ داران بھی موجود تھے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے اس شہر کے باسیوں کو ان کے بنیادی حقوق دلانے ہیں چاہے اس میں میری جان کیوں نہ چلی جائے میں اپنے مطالبات سے کبھی دستبردار نہیں ہونگا انہوں نے کہا کہ اب ہم نے اپنی اگلی نسل کو جاہل بنے نہیں دیں گے اب ہمارے گھروں کے آگے سے کوڑا کرکٹ اور کچرا ان حکمرانوں کو اٹھانا پڑے گا اب حکمرانوں  کو ہمیں ہمارا حق دینا ہوگا اگر آپ لوگوں نے میرا ساتھ دیا تو ہم اپنا حق حاصل کر سکتے ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ یہ شہر ملک کو ستر فیصد ٹیکس  کما کر دیتاہے اور اس شہر کے لوگ پانی کے بوند بوند کو ترس رہے ہیں یہ شہر لاوارث نہیں ہے اس کے وارث آگئے ہیں ہم  ان کو بوند بوند کے لئے بلکتا نہیں دیکھ سکتے , نا ہی  بچوں کو تعلیم سے محروم ہوتا دیکھیں گے  انہوں نے کہاکہ ہم نے اپنی احتجاجی تحریک کا تیسرا مرحلہ شروع کردیا ہے جس میں ہم گھر گھر جاکر لوگوں سے مل رہے ہیں اب ہم اس احتجاج کا دائراہ وسیع کرتے ہوئے گلی گلی میں پھیلائیں گے انہوں نے کہاکہ جو حکمران یہ سمجھ رہے تھے کہ شاہراہ فیصل پر ہم پر ظلم کی انتہا کر کے  ڈرا دیں گے وہ  دیکھ لیں اب یہ احتجاج  پورے شہر میں پھیل رہا ہے اور عنقریب پوری سندھ کی عوام مسائل کے حل کے لےُ پاک سر زمین پارٹی کا حصہ بن کر سندھ کے تمام نام نہاد حکمرانوں سے نجات حاصل کرنے میں اپنا بھرپور کردار ادا کریں گے .

 

کراچی ،20 مئی2017

پاکستان مسلم لیگ (فنکشنل) صو بہ سندھ کے جنرل سیکریٹری نوابزداہ راشدعلی خان کا پاک سرزمین پارٹی میں شمولیت کا اعلان

پاکستان کو بنانے میں ہمارے بزرگوں نے بے انتہاء قربانیاں دیں آج مصطفی کمال کی سربراہی میں یہ قافلہ پاکستان بچانے نکلا ہے، نواب راشد علی

نواب راشد جس پائے اور کردار کے سیاست دان ہیں ان کے شامل ہونے سے پی ایس پی کی قوت میں مزید اضافہ ہوگا، مصطفی کمال

میں پاکستان کو سب سے زیادہ کما کر دینے والے شہر کا شہری ہوں مجھے اس پر فخر ہے،

لوگ روزانہ کی بنیاد پر ہم سے آکر جڑ رہے ہیں جس کی وجہ سے ظالم اور جابر حکمرانوں کی نیندیں حرام ہوگئی ہیں ,مصطفی کمال

 
پاکستان مسلم لیگ (فنکشنل) صو بہ سندھ کے جنرل سیکریٹری نوابزداہ راشدعلی خان نے پاک سرزمین پارٹی میں شمولیت کا اعلان کر دیایہ اعلان انہوں نے آج پاکستان ہاؤس میں پی ایس پی کے چیئر مین سیدمصطفی کمال ، صدر انیس قائم خانی ، جنرل سیکریٹری رضا ہارون دیگر ذمہ داران کے ہمراہ پر ہجوم پریس کانفرنس سے خطاب کر تے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہاکہ میں نے اپنی زندگی کے 37سال فنکشنل لیگ کو دیئے اورمختلف ذمہ داریوں پر فائز رہالیکن مجھے وزارت ،سینیٹر شپ یا کچھ اور نہیں بننا بلکہ جس پاکستان کو بنانے اور بچانے کے لیے اس پاک سرزمین کو بنانے میں ہمارے بزرگوں نے بے انتہاء قربانیاں دیں آج مصطفی کمال کی سربراہی میں یہ قافلہ پاکستان بچانے نکلا ہے جو پاکستان کے جھنڈے کو اٹھا کر ملک کی خدمت کا عز م رکھتاہے اس سے متاثر ہوکر میں بھی آج وطن پرستوں کے اس قافلے میں شامل ہورہاہوں۔ ا نہوں نے کہاکہ پاک سرزمین پارٹی لوگوں کے بنیادی حقوق اور عوامی مسائل کے حل کی جنگ لڑ رہی ہے میں انشاللہ ثابت قدم رہتے ہوئے اس جنگ میں مصطفی کمال کا دستِ بازو بنوں گا۔پاک سرزمین پارٹی کے چیئر مین سید مصطفی کمال نے فنکشنل لیگ سندھ کے جنرل سیکریٹری نواب راشدکو وطن پرستوں کے اس قافلے میں شامل ہونے پر مبارکباد دیتے ہوئے کہاکہ نواب راشد جس پائے اور کردار کے سیاست دان ہیں ان کے شامل ہونے سے پی ایس پی کی قوت میں مزید اضافہ ہوگا۔ انہوں نے کہاکہ ہم اپنے 16پوائنٹ سے ایک قدم بھی پیچھے نہیں ہٹیں گے میرا یہ حق بنتا ہے کے اپنے شہر کے بچوں سے پانی تعلیم اور صحت کی سہولیات چھینے والوں کے خلاف احتجاج کروں انہوں نے کہاکہ میں پاکستان کو سب سے زیادہ کما کر دینے والے شہر کا شہری ہوں مجھے اس پر فخر ہے لیکن میں اپنے بچوں کے پانی مانگنے کے مطالبہ سے دستبردار نہیں ہوسکتا، صحت، تعلیم ، بجلی اور صفائی کی سہولیات سے دستبردار نہیں ہو سکتا۔ انہوں نے کہاکہ ہم نے اپنی احتجاجی تحریک کا تیسرا مرحلہ شروع کردیا ہے جس میں ہم گھر گھر جاکر لوگوں سے مل رہے ہیں اب ہم اس احتجاج کا دائراہ وسیع کرتے ہوئے گلی گلی میں پھیلائیں گے انہوں نے کہاکہ لوگ روزانہ کی بنیاد پر ہم سے آکر جڑ رہے ہیں جس کی وجہ سے ظالم اور جابر حکمرانوں کی نیندیں حرام ہوگئی ہیں

کراچی ،20 مئی2017

پاک سرزمین پارٹی کے چیئرمین سید مصطفی کمال نے کہا کہ  معصوم بچوں، خواتین اور بزرگوں پر گولیاں اور شیل برسانے والوں کو چین سے نہیں بیٹھنے دیں گےاب کراچی کے ہر گلی اور محلے میں احتجاج ہوگا، کراچی کی عوام کو اپنے حقوق کیلئے ایک بار پھر نکلنا ہوگا،ہم  اپنے حقوق لے کر ہی دم لیں گے ان  خیالات کا اظہار انہوں نے پی ایس پی کے تحت جاری تیسرے مرحلے کی عوامی رابطہ مہم کے موقع پر کراچی کے مختلف علاقوں کھوکھراپار ڈاکخانہ ،  شاہ فیصل ٹاؤن آفس کا دورہ اور شاہ فیصل پانچ نمبر چورنگی کے دورے کے موقع ہر عوام سے گفتگوکرتے ہوئے کیا.
 
انہوں نے لوگوں سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا کے ان کے حقوق کی جنگ وہ اپنی آخری سانس تک لڑیں گے انہوں نے کہا کہ کوئی اس شہر کی عوام کو لاوارث نہ سمجھے میں اب اپنے لوگوں کو بوند بوند کے لئے ترستا نہیں دیکھوں گا، شاہراہ فیصل اور کھوکھراپار پر سید مصطفٰی کمال کی آمد کے موقع پر عوام کی بڑی تعداد جمع ہو گئی جس پر انہوں نے کہا کہ عوام کو دیکھ کر ظالم اور جابر حکمرانوں کی نیندیں حرام ہوچکی ہیں اب بھی وقت ہے میرے لوگوں کو ان کے بنیادی حقوق دے دیں ورنہ گلی گلی احتجاج ہوگا انہوں نے کہا کہ شاہ فیصل  اور کھوکھراپار کے لوگوں اٹھو اور تیاری کرو اب ہم نے ان جابروں کے آگے اپنے بچوں کو بلکتا نہیں چھوڑنا ہے، ان کا کہنا تھا کہ ملک بھر کے مظلوم اور مہنگائی میں پسی ہوئی عوام کو بنیادی حقوق  حصول کے لیے پاک سر زمین پار ٹی کی جدوجہد  میں بھرپور ساتھ دینا ہوگا

کراچی ،20 مئی2017

پاک سرزمین پارٹی کے عوامی مسائل کے حل کیلئے جاری احتجاجی تحریک کے تیسرے مرحلے کی تیاری کاآج با قاعدہ آغاز 
میں اس ظلم اور زیادتی کے خلاف آخری سانس تک آواز اٹھاتا رہوں گا، سید مصطفی کمال
میں اپنے بچوں کے لئے پانی اچھی تعلیم اور صفائی کے اچھے انتظام کے حق سے کسی صورت دستبردار نہیں ہوسکتا، مصطفی کمال
کراچی والو تیاری کرلو بہت جلد لوگوں کے مسائل کے حل کے لئے اگلے لائحہ عمل کا اعلان کروں گا ۔ مصطفی کمال
مجھے سیکیورٹی نہیں چاہیے میرا رب میرا محافظ ہے،

پاک سرزمین پارٹی کے عوامی مسائل کے حل کیلئے جاری احتجاجی تحریک کے تیسرے مرحلے کی تیاری کاآج با قاعدہآغاز کر دیا گیا اس سلسلے میں پی ایس پی کے زیر اہتمام عوامی رابطہ مہم کے پہلے روز پی ایس پی کے چیئر مین سید مصطفی کمال اور صدر انیس قائم خانی دیگر ذمہ داران کے ہمراہ کراچی کے مختلف علاقوں لیاقت آباد سپرمارکیٹ ،نیو کراچی سندھی ہوٹل اور ناظم آباد گول مارکیٹ کادورہ کیا وہاں پر موجود لوگوں نے ان کاپرتپاک استقبال کیا۔ اس مو قع پرعوام اور تاجربرادری سے گفتگو کر تے ہوئے چیئر مین پی ایس پی سید مصطفی کمال نے کہاکہ میں اس ظلم اور زیادتی کے خلاف آخری سانس تک آواز اٹھاتا رہوں گا میں اور میرے کارکنان اپنے لوگوں کو پیاسا مرتے نہیں دیکھ سکتے اگر میرے بچوں کو پانی نہیں دوگے تو ہم سڑکیں بھی بندکریں گے اوریہ شہربھی بند کریں گے لیکن ناکوئی گولی چلے گی نا کوئی پتھرچلے گا، میں اپنے بچوں کے لئے پانی اچھی تعلیم اور صفائی کے اچھے انتظام کے حق سے کسی صورت دستبردار نہیں ہوسکتا انہوں نے کہاکہ میں اپنے شہر کے بچوں کو جاہل بنتا نہیں دیکھ سکتا میں آخری سانس تک اپنے شہر اور ملک کے لوگوں کے بنیادی مسائل کے حل کے لئے جدوجہد کرتا رہوں گاانہوں نے عوام کو مخاطب کر تے ہوئے کہاکہ کراچی والو تیاری کرلومیں بہت جلد لوگوں کے مسائل کے حل کے لئے اگلے لائحہ عمل کا اعلان کروں گا۔ انہوں نے لوگوں سے کہا کہ ہم سیاست نہیں کر رہے ہم اپنے بچوں کے بہتر مستقبل کے لئے جدوجہد کررہے ہیں اورمیں حکمرانوں کو کہتا ہوں کے تم میرے لوگوں پر بربریت کر کے ہمیں دبانا چاہتے ہو جس میں تمہیں ناکامی ہوگی اور آج اس شہر میں بسنے والی تمام اکائیاں ایک جھنڈے تلے جمع ہوگئی ہیں جس سے ظالم اور جابر حکمرانوں کی ٹانگیں کانپ رہی ہیں،انہوں نے کہاکہ وزیر اعلی نے میری سیکیورٹی واپس لے لی ہے وہ انتظار کر رہا ہے کے میں ان کو اپنی سیکیورٹی کے لئے فون کروں لیکن میں نہیں کرونگا مجھے سیکیورٹی نہیں چاہیے میرا رب میرا محافظ ہے۔انہوں نے کہاکہ یہ شہر ملک کا ستر فیصد ریونیو کماکردیتاہے لیکن پانی کی بوند بوند کو ترس رہا ہے اب اس شہر کا وارث آگیا ہے جو نہ ان کوپانی کے لئے بلکتا دیکھے گا اور نہ ہی یہاں کے بچوں کو تعلیم سے محروم ہوتا دیکھے گاابھی سندھ گورنمنٹ نے صرف ایک ٹریلر دیکھا ہے ابھی پوری فلم باقی ہے جو حکمران یہ سمجھ رہے تھے کہ شاہراہ فیصل پر ہمارے لوگوں پر ظلم کی انتہا کر کے ہمیں ڈرا دیں گے وہ دیکھ لیں اب یہ احتجاج اس شہر کی گلی، گلی میں پھیلے گا۔

———–

نجی کمپنی کی جانب سے کچرا جی ٹی ایس کے بجائے ساحلی پٹی پر پھینکنے پر پی ایس پی کے ترجمان کااظہارتشویش 
اربوں روپے کا ٹھیکا دینے کے باوجود بھی کراچی کچرے کا ڈھیر بناہواہے،ترجمان
ساحلی پٹی پر کچرا پھینکنا ساحل کی خوبصورتی کو نقصان پہنچانے کے مترادف ہے، سندھ کے ساحل کی تباہی کی ذمہ دارپی پی پی ہے. ترجمان پی ایس پی

پاک سرزمین پارٹی کے ترجمان نے نجی کمپنی کی جانب سے کچرا جی ٹی ایس کے بجائے ساحلی پٹی پر پھینکنے پر گہری تشویش کا اظہار کیا ہے۔اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہاکہ نجی کمپنی کو کراچی سے کچرا اٹھانے کیلئے اربوں روپے کا ٹھیکا دیا گیاہے مگر افسوس کے ساتھ کہنا پڑھرہا ہے کہ اربوں روپے کا ٹھیکا دینے کے باوجود بھی کراچی کچرے کا ڈھیر بنایاہواہے۔ انہوں نے کہاکہ سندھ کے ساحل کی تباہی کی ذمہ دارپی پی پی ہے اور ساحلی پٹی پر کچرا پھینکنا نا صرف ساحل کی خوبصورتی کو نقصان پہنچانے کے مترادف ہے بلکہ اس کے ساتھ ساتھ آبی حیات کے لئے بھی نقصان کا باعث ہے جس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے۔ انہوں نے ، گورنر سندھ اور دیگر اعلی حکام سے مطالبہ کیاہے کہ وہ ساحلی پٹی پر کچرا پھینکنے کا فوری نوٹس لیں اورنجی کمپنی سے پوچھ گچھ کی جائے کہ کچرا جی ٹی ایس کی بجائے ساحلی پٹی کیوں پھینکا جارہاہے۔اس اقدام کو فوری طور پہ روکا جائے اور انکے خلاف سخت قانونی کاروائی کی جائے

 

کراچی ،19 مئی2017

پیپلز پارٹی نے کراچی کو کچرے کا ڈھیر اور اندرون سندھ کو کھنڈر بنانے کا تہیہ کر رکھا ہے، آصف حسنین

پیپلزپارٹی کے جیالے کراچی کو درکنار اپنی پارٹی کے بانی قائد ذوالفقار علی بھٹو کے آبائی شہر لاڑکانہ کو بھی ماڈل شہر نہیں بنا سکے،صدرکراچی ڈویژن

کراچی ( ) پاک سرزمین پارٹی کراچی ڈویژن کے صدر آصف حسنین نے کہا ہے کہ پیپلز پارٹی نے کراچی کو کچرے کا ڈھیر اور اندرون سندھ کو کھنڈر بنانے کا تہیہ کر رکھا ہے، کراچی میں جگہ جگہ کچرے کے ڈھیر، سیوریج کا پانی، تباہ حال سڑکیں ان کی کارکردگی کا پول کھولتی نظر آتی ہیں، گزشتہ دس سال سے وزیر اعلی اور دیگر وزارتوں پر فائض پیپلزپارٹی کے جیالے کراچی کو درکنار اپنی پارٹی کے بانی قائد ذوالفقار علی بھٹو کے آبائی شہر لاڑکانہ کو بھی ماڈل شہر نہیں بنا سکے، پاکستان ہاؤس سے جاری ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی نے گزشہ ادوار سے قائم حکومت کے دوران ترقیاتی کام نہیں کیے بلکہ صرف کرپشن کی داستانیں رقم کی ہیں، انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی کے وزیروں کے گھروں سے نیب اور قانون نافذ کرے والے ادارے پیسوں کے بریف کیس برآمد کرتے ہیں کرپشن کی رقم مختلف زرائع سے بیرون ملک منتقل کرتے ہوئے پکڑیں جاتی ہے، انہوں نے کہا کہ کراچی اور سندھ کو تباہ کرنے والی پیپلزپارٹی آج پی ایس پی کے احتجاج کی بدولت شہر کراچی میں ترقیاتی کام کرنے پر مجبور ہوئی ہے اب بھی کراچی کے اکثر علاقوں میں پانی کی ترسیل کا نظام ہی موجود نہیں اور جو ہے اسے بھی تباہ کردیا گیا ہے، انہوں نے کہا کہ پاک سرزمین پارٹی کی بڑھتی ہوئی مقبولیت سے خوف زدہ ہو کر پیپلز پارٹی کے اوچھے ہتھکنڈوں پر اتر آئی ہے اب سند ھ کی عوام جاگ چکی ہے اب ان کے اوچھے ہتھکنڈے مزید کامیابیاں نہیں آئیں گے عوام بے پاک سرزمین پارٹی کے ملین مارچ میں لاکھوں کی تعداد میں شرکت کر کے ہمارے حق میں فیصلہ دیدیا ہے انہوں نے کہا کہ سندھ کی حکمران جماعت صوبے کے عوام کو بتائے کہ ایک دہائی سے زیادہ سندھ پر حکمرانی میں صوبے کے لئے سواےُ کرپشن اور سندھ کے عوام پینے کے پانی مناسب خوراک تعلیم اور صحت سب سے محروم ہیں

کراچی ،18 مئی2017

پاک سرزمین پارٹی چیئرمین سید مصطفی کمال کی ہدایت پر عوامی رابطہ مہم کا باقاعدہ آغاز 

کراچی کے مختلف ڈسٹرکٹ میں کراچی ڈویژن کے ذمہ داران اور کارکنان نے گلی گلی، محلے اور بازاروں کا تفصیلی دورہ

پاک سرزمین پارٹی چیئرمین سید مصطفی کمال کی ہدایت پر عوامی رابطہ مہم کا باقاعدہ آغاز کردیا گیا ہے اور اس سلسلے میں کراچی کے مختلف ڈسٹرکٹ میں کراچی ڈویژن کے ذمہ داران اور کارکنان نے گلی گلی، محلے اور بازاروں کا تفصیلی دورہ کیا گیا اور عوام الناس کو سید مصطفی کمال کے ملین مارچ کی بھرپور ساتھ دینے پر ان کا شکریہ اور احتجاج کے اگلے مرحلے کے حوالے سے سیدھا مصطفی کمال کا پیغام پہنچایا گیا، اس موقع پر عوام کی جانب سے مصطفی کمال کے انکے حقوق کیلئے کی جانے والے جدوجہد، 18 روزہ پریس کلب پر دھرنا اور ملین مارچ کے کامیاب انعقاد پر سراہا اور سندھ حکومت کی پر امن و نہتے خواتین، بچوں بزرگوں اور نوجوانوں پر بلا جواب شیلنگ، لاٹھی چارج اور بد ترین تشدید پر شدید غم و غصے کا اظہار کیا گیا، عوام الناس نے اس موقع پر پی ایس پی پی جے وفد کو مصطفی کمال کے اگلے احتجاجی مرحلے میں اپنے بھرپور تعاون اور قدم بہ قدم ساتھ چلنے کا یقین دلایا
 

کراچی ،17 مئی2017

کراچی کے عوامی نے جو شمع جلائی ہ اس کی روشنی پورے ملک میں پھیل گئی ہے۔ مصطفی کمال
مصطفی کمال کے پاس تاریخ ہے لیکن ابھی نہیں دوں گا،
عوامی طاقت کے باوجود ظلم و جبر کا جواب ہم نے پرامن رہ کر دیا جو ہماری سب سے بڑی بہادری ہے، مصطفی کمال
تم لوگوں کے ثابت قدم رہ کر تمام فتوحات حاصل کر لی ہیں،
پاکستان میں سیاست یا جدوجہدعوام کے بنیادی مسائل پر ہونی چاہیے جو پاک سرزمین پارٹی کر رہی ہے
کراچی کے لوگ ٹکڑوں میں بٹے ہوئے تھے لیکن پی ایس پی نے انہیں ایک جھنڈے تلے جمع کیا اور انہیں ایک قوم بنایا، مصطفی کمال

کراچی ()پاک سرزمین پارٹی کے چیئر مین نے کہاہے کہ ہمارے پرامن احتجاج معصوم بچوں، خواتین، بزرگوں پر شلنک کی گئی لیکن عوام نے قومیت ، مسالک اور مذہب سے بالا تر ہو کر ایک دوسرے کو بچایا ،سندھ حکومت کہتی ہے لوگوں پر تشدد نہیں کیا مگر ہمارے 71 سے زائد لوگوں کو بیہیمانہ تشدد کو نشانہ بنایا گیا، جن کی لسٹ ہمارے پاس موجود ہیں،عوامی طاقت کے باوجود ظلم و جبر کا جواب ہم نے پرامن رہ کر دیا جو ہماری سب سے بڑی بہادری ہے ،پہلے دن سے سچائی کے علم کو تھاما اور ظلم و بربریت کے آگے ڈٹے رہے ، کارکنوں تم شیطان نے ڈریاہوگاکہ نوکری جانے ، جان جانے کاخدشہ تھا لیکن تم لوگوں نے ہمارے ساتھ جڑ کر مثال قائم کردی ہے، میرے کارکنوں تم نے ڈنڈے، آنسو گیس اور گولیاں برداشت کیں، تم اپنے امتحان میں سرخرو ہوگئے ہو ،بدلے لینے کی طاقت تھی لیکن تم لوگوں نے اپنے غصے کو اپنے قابو میں رکھا ،کسی کی جان لینا بہادری نہیں ہے تم لوگوں کے ثابت قدم رہ کر تمام فتوحات حاصل کر لی ہیں،مصطفی کمال کے پاس تاریخ ہے لیکن ابھی نہیں دوں گا، کل سے ہر گھر ہر جاؤ اور لوگوں کو ان کے حقوق لینے کیلئے تیار کرو. اللہ تعالی کا شکر ہے،تم لوگوں نے ہمارا سر فخر سے بلند کردیا ہے۔ ان خیالات اظہار انہون نے پی ایس پی کے مرکز ی دفتر پاکستان ہاؤس ذمہ داران کے اجلاس سے خطاب کر تے ہوئے کیا۔اس موقع پر صدر انیس قائم خانی، سیکریٹری جنرل رضاہارون، وسیم آفتاب ، اشفاق منگی، افتخار رندھاوا، افتخار عالم، اور نیشنل کے ارکان بھی موجود تھے۔ سید مصطفی کمال نے کارکنوں کو مخاطت کر تے ہوئے کہاکہ تم نے ہمارا سر فخر سے بلند کر دیا ہے کہ تمہیں میں آج خراج تحسین پیش کر تاہوں کراچی کے عوامی نے جو شمع جلائی ہ اس کی روشنی پورے ملک میں پھیل گئی ہے،پاکستان میں سیاست یا جدوجہدعوام کے بنیادی مسائل پر ہونی چاہیے جو پاک سرزمین پارٹی کر رہی ہے ،پاک سرزمین پارٹی کے کارکنان عظیم کام کر رہے ہیں، اپنے لیے اور ان لوگوں کیلئے جو مجبوریوں کی وجہ سے گھروں سے باہر نکل نہیں سکتے انہوں نے کہاکہ دو لوگوں سے ایک جدوجہد شروع ہوئی اور آفرین ہے میرے لوگوں تم نے اسے کاروان کی شکل دے دی عوام چاہتے تو شیلنگ کا جواب دیتے، لیکن انہوں نے ہماری تعلیمات پر چلتے ہوئے ایک پتھر تک نہیں اٹھایا ، مصطفی کمال اور انیس قائم خانی کیلئے پروٹوکول مانگنے یا کسی کو جیل سے چھڑوانے نہیں نکلے تھے ،کراچی کے لوگوں کے صاف پانی، تعلیم اوراسپتالوں میں ادویات ، نوجوانوں کیلئے روز گار اورمعیاری ٹرانسپورٹ کا نظام مانگ رہے ہیں ا۔ انہوں نے کہاکہ تبصرے کرنے والے لوگوں نے الزامات لگائے لیکن انہوں نے دیکھا کہ ہم نے بیہوش بچوں، خواتین، بزرگ اور شلینگ سے متاثرہ پولیس والوں کو بھی بچایا ۔ انہوں نے کہاکہ ہمارا ایک مطالبہ ایسا نہیں جو ہمارے ذاتی مفادات کیلے رکھا گیا ہو ہم مذاکرات کس بات پر کریں؟ کچرا اٹھانے، صاف پانی، بجلی گیس تمام لوگوں تک پہنچانے کیلئے؟ ہمارے مطالبات ماننے کیلئے سنجیدہ ہوتے تو نوٹیفیکیشن نکالتے اور کام کا آغاز کرتے لیکن اربوں ورپے کی کرپشن کرنے والے عوام کو ان کے حقوق کیوں دیں گے،انہوں نے کہاکہ عوام کو سہولیات پہنچانے کیلئے وزیر اعظم ، وزیر اعلی سمیت تمام وزراء نے حلف اٹھا رکھا ہے لیکن عوام پر پانی مانگنے پر تشدد کیا جاتاہے ۔ انہوں نے کہاکہ کارکنوں نے گھر گھر جاکر لوگوں کو ٹرانسپورٹرز کو راضی کیا اور پورے شہر سے عوام نکلے اورپورے پاکستان نے دیکھا کے کراچی کی تمام قومیتیں ایک جگہ مل کر ایک دوسرے کے حقوق کیلئے نکلے اب تمہیں پانی، بجلی، گیس روزگار اور ٹرانسپورٹ کا نظام دینا ہی پڑے گانہ صرف کراچی بلکہ پورے سندھ کے لوگوں کو ان کے حقوق دلوانے کیلئے اب احتجاج ہوگا اورکارکنوں تیاری کرو، ظلم و جبر کو برداشت کر لیا، اب کراچی کی ہر سڑک ہر احتجاج ہوگا۔انہوں نے کہاکہ16 نکات سے کسی قیمت پر دستبردار نہیں ہوسکتے کراچی کے لوگ ٹکڑوں میں بٹے ہوئے تھے لیکن پی ایس پی نے انہیں ایک جھنڈے تلے جمع کیا اور انہیں ایک قوم بنایا۔انہوں نے کہاکہ ہم اب ہر گھر میں جائیں گے، آنے بنیادی حقوق کیلئے اب ہر جگہ احتجاج کیا جائے گاپولیس والوں تمہاری قبر میں تم ہی لیٹو گے وزیر اعلی نہیں اورخدا کا قہر نازل ہوگا، جنہوں نے معصوم اور نہتے لوگوں ہر شیلنگ کی آور گولیاں برسائیں انہوں نے کہاکہ یہ اسرائیل فلسطین اور کشمیر نہیں جہاں عوام کی آواز کو طاقت سے دبایا جاتا ہے مارنے اور مرنے کی سیاست نہیں کرنا چاہتے، اگر درمیان سے مصطفی کمال ہٹ گیا تو کس طرح پیاسے عوام سے نمٹو گے مصطفی کمال اپنے کارکنان کو آخر سانس تک ہتھیار تھامنے نہیں دے گاانہوں نے کہاکہ یہ لوگ پولیس، رینجرز اور دیگر قانون نافذ کرنے والوں کے بچوں کیلئے بھی پانی، بجلی اور روزگار مانگ رہے تھے ۔

کراچی ،16 مئی2017

٤٨ گھنٹوں میں اگلے لائحہ عمل کا اعلان کرونگا، مصطفی کمال
خواتین، بزرگوں بچوں اور نوجوانوں کو سلام پیش کرتا ہوں آج تم لوگ سرخرو ہو گئے ہو، مصطفی کمال
پوراکراچی اور پاکستان آوازیں دے رہا ہے کہ ہم آپ کے ساتھ ہیں,
پاکستان کی تمام سیاسی،مذہبی سماجی تنظیموں نے ہمارے ساتھ اظہار یکجہتی کیا ان کے شکر گزار ہیں، مصطفی کمال

کراچی ( )پاک سرزمین پارٹی کے چیئرمین سید مصطفی کمال نے کہا ہے کہ کراچی کی خواتین، بزرگوں بچوں اور نوجوانوں کو سلام پیش کرتا ہوں، تم لوگ سرخرو ہو گئے ہو، ہمارے عزم و حوصلہ نے ظالموں جابروں کو خوف میں مبتلا کردیا، ریلی چلنے سے پہلے ایوانوں میں لرزا طاری ہوچکا تھا،ِ اپنے مطالبات سے ہرگز پیچھے نہیں ہٹیں گے اور48 گھنٹوں میں اگلے لائحہ عمل کا اعلان کرونگااور اگر ہمارے مطالبات مان لیے گئے تو احتجاج ختم کردینگے.،ہم نے صبر و ہمت مظاہرہ کیا کسی بھی سرکاری اور نجی املاک کو نقصان نہیں پہنچایا اور اپنے سینوں پر شیل کھاتے رہے اور اس مشکل وقت میں بھی پر امن رہنا ہی پاک سرزمین پارٹی کے کارکنان کا سب سے بڑا ہتھیار ہے ان خیالات اظہار سید مصطفی کمال نے کلا کوٹ تھانے سے غیر قانونی جبری گرفتار کے بعد رہائی ملنے پر پاک سرزمین پارٹی کے رہنماؤں کے ہمراہ پاکستان ہاؤس میں رات کے آخری پہر ایک پرہجوم پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا، سید مصطفی کمال نے کہا کہ پاکستان میں جمہوریت خالص ہے نہ آمریت، صرف پاکستان سرزمین پارٹی ہی خالص جماعت ہے جس میں کردار والے لوگ شامل ہیں جنہیں ڈیل کر کے مقصد سے نہیں ہٹایا جاسکتا، جو لوگوں کی مجبوری کی وہ سے نہ نکل سکے اور گھروں میں بیٹھ کر دعائیں کیں ان ماؤں بہنوں کو سلام پیش کرتا ہوں انہوں نے کہا کہ پانی مانگنے والوں پر ریاست کا ایسا ظلم و بربریت انسانیت سوز واقعہ ہے، بے غیرت حکمران اپنے ہی عوام کے پیسے پر ڈاکہ ڈالتے ہیں اور انہیں کو سپنے جبر و ظلم کا شکار بناتے ہیں، زرادی صاحب کی گورنمنٹ کرپٹ گورنمنٹ ہے، ابھی تو ہم ریڈ زون میں داخل ہی نہیں ہوئے نہ ہی ہم نے کوئی قانون توڑا تھا جو ہم پر دھاوا بولا گیا اب وہ وقت آگیا ہے حکمرانوں کو لڑکھڑا کر گر جانا یے، انہوں نے کہا کہ کراچی کے عوام بے پورے ملک کیلئے ایک نئی شمع روشن کی ہے اور اب حکمرانوں کے دن گنے جاچکے، اب تک ان کا واسطہ کردار والوں سے نہیں پڑا تھا انہوں نے کہا کہ ہمارے رہنماؤں پر لاٹھی چارج کیاگیا، کارکنان کے ہاتھ پیر توڑ دیے گئے اور ایسے وقت میں غصے کوقابو میں رکھنا پاک سرزمین پارٹی کے کارکنان کی سب سے بڑی کامیابی اور ہمارا ہتھیار ہے انہوں نے کہا کہ کراچی پاکستان کو 70 فیصد ریونیو کما کر دیتا ہے اور وزیراعظم پاکستان جو کہ صرف پنجاب کو پاکستان سمجھتے ہیں کراچی کے پیسوں پر پاکستان میں موٹر وے اور دیگر میگاپروجیکٹس کا افتتاح کرتے پھر رہے ہیں انہوں نے کہا کہ ہمارے کارکنان ہمارے ہدایت پر صبر و تحمل سے رہے ان نااہل حکمرانوں سے ایک ریلی نہیں سنبھالی گئی اب گلی گلی کے احتجاج کو کس طرح سنبھالیں گے اب عزیز آباد نہیں پوراکراچی اور پاکستان آوازیں دے رہا ہے کہ ہم آپ کے ساتھ ہیں انہوں نے کہا کہ پولیس نے شرمندگی کا اظہار کیا، انہیں حکمران بے آڈر دیا تھا، سندھ حکومت نے ہمارے صبر کا پیمانہ دیکھا، آج سے اگلے مرحلے کا آغاز ہوگا 18 دن ہم بے پریس کلب پر احتجاج کیا، آج ملین مارچ دوسرا دور تھا، اب تیسرے دور کا اعلان کریں گے 5 ہزار افراد ہوتے تو ہمیں روک لیتے، لیکن ملین لوگوں کو دیکھ کر ان کے اوسان خطاب ہوگئیانہوں نے کہا کہ گرفتار کرنے والے بتائیں کس جرم میں گرفتار کیا؟ خواتین پر شیلنگ کس جرم میں کی گئی؟ وفاق حکومت پولیس کو آرڈر دینے والے حکمرانوں کے خلاف نوٹس لیں انہوں نے کہا کہ پاک سرزمین پارٹی کے رہنماؤں کو شیل لگے، خواتین اور بچے بیہوشی کے عالم میں پڑے رہیانہوں نے کہا کہ پاکستان کی تمام سیاسی،مذہبی سماجی تنظیموں نے ہمارے ساتھ اظہار یکجہتی کیا ان کے شکر گزار ہیں.

============

 

سیا سی، سماجی،مذہبی،صنتکارو تاجروں سمیت پاکستان اور دنیا بھر سے تعلق رکھنے والے مختلف طبقہ فکر کے افراد نے پی ایس پی کے ملین مارچ کا شرکاء سے اظہار یکجہتی 
پر امن ملین مارچ کے نہتے شہریوں جن معصوم بچے، خواتین،اور بزرگوں پر شیلنگ کرنا ظلم و بربریت کی کھلی مثال ہے، دنیا بھر سے عوام کے تاثرات
پاکستان بھر سے عوام نے کٹھن وقت بھی ثابت قدم رہنے پع کراچی والوں کو سلام پیش کیا 

کراچی( )سیا سی، سماجی،مذہبی،صنتکارو تاجرشخصیات سمیت پاکستان اور دنیا بھر سے تعلق رکھنے والے مختلف طبقہ فکر کے افراد نے پی ایس پی کے تحت ہونے والے ملین مارچ کی تاریخ ساز کامیا بی ہے۔ان خیالات کا اظہار عوام الناس نے پی ایس پی کے مرکزی سیکر یٹر یٹ پا کستا ن ہا ؤس میں ٹیلی فون،ای میل،فیس بک،ایس ایم ایس اور سوشل میڈیا پر مبارکباد کے بڑی تعداد میں موصول ہونے والے پیغامات میں کیا۔ ان پیغامات میں عوام کا کہنا تھا کہ پر امن ملین مارچ کے نہتے شہریوں جن معصوم بچے،خواتین،اور بزرگوں پر شیلنگ کرنا ظلم و بربریت کی کھلی مثال ہے۔ پر امن احتجاج کرنا ہر پاکستانی کا حق ہے لیکن ایک پر امن جمہوری اورآئینی احتجاج کو طاقت کے بلا پر دبانے کی کوشیش کرنے کو ظلم داستان رقم کر دی ہے ایک پر امن احتجاج اور پر امن لوگوں کے ساتھ وحشیانہ تشدد پیپلزپارٹی کے مکرو چہرے کو بے نقاب کر دیا ہے، کراچی والوں کو سلام پیش کر تے ہیں کٹھن وقت بھی ثابت قدم رہے اور ملین مارچ کو کامیاب بنا کر اپنے انے والے نسلوں کے مستقبل کو محفوظ کیا۔

 

کراچی ،15 مئی2017

Mustafa Kamal, PSP leaders released in Karachi

Pak Sarzameen Party (PSP) Chairman Mustafa Kamal and other party leaders was released from detention in the wee hours of Monday, police said. The leaders were detained along with several party workers for trying to enter Karachi’s red zone.

City Senior Superintendent of Police, Adeel Hussain Chandio confirmed that the party leaders were released from detention after successful negotiations with the provincial government.

Talking to the media after his release the PSP chairman condemned the use of force to disperse his party workers and said that the provincial government should be ashamed for arresting citizens asking for water.

On Sunday, a heavy contingent of police resorted to baton charge and shelling to disperse hundreds PSP activists as they tried to march towards the Chief Minister House after the negotiations between PSP and the ruling PPP party ended without the parties reaching any consensus.

The PSP was insistent to march towards the red zone in Karachi but the Sindh government was reluctant to let them do so.

Hundreds of PSP activists had gathered at Shahrah-e-Faisal near FTC bridge after the provincial government imposed Section 144 of the Criminal Procedure Code (CrPC) in Karachi’s Red Zone on Sunday ahead of an announced march of the PSP to the Chief Minister House.

A view of 'million march' organised by PSP. —Online
A view of ‘million march’ organised by PSP. —Online

The PSP delegation which held talks with the ruling PPP leaders was led by Raza Haroon.

The leaders of the protesting PSP kept announcing that they will march towards the Red Zone, however, law enforcement personnel erected barricades on all roads leading to the chief minister and governor houses.

Nisar condemns use of force against citizens

Interior Minister Chaudhry Nisar reacted to the development and said that the Constitution ensures the provision of holding all types of political gatherings, DawnNews reported.

He condemned the use of power against protesters and said that the provincial government was showing ignorance to the issues of Karachi and resorted to torture against those demanding their rights. “Use of force against peaceful political gathering is quite illogical,” he said.

PPP acted when govt’s writ was challenged, says Shehla Raza

PPP leader Shehla Raza, while talking to DawnNews, defended the provincial government’s move saying PSP workers were repeatedly asked “to refrain from entering the Red Zone as it was an illegal activity.”

She, however, said PPP believes in democratic rights of the people and works accordingly. She further said that

“The protesters were initially approached to hold a dialogue regarding their demands, but when they challenged the writ of the government the due action was taken against them,” she maintained.

While responding to the statement made by the interior minister, Shehla Raza mentioned that the government only used water cannon unlike the actions of the incumbent PML-N government in Punjab.

She bluntly compared the recent development with the Model Town tragedy, where police had resorted to live firing, which had resulted in the death of more than a dozen civilians.

‘PSP leaders booked over violation of Section 144’

Police have detained at least 16 leaders and workers of PSP, said Karachi-South DIG Azad Khan.

The DIG told DawnNews that the arrested leaders include Mustafa Kamal, Dr Sagheer Ahmed, Raza Haroon, Iftikhar Alam, Hafeez. “They would be booked on violation of Section 144.”

He claimed that the protesters were given a No Objection Certificate to carry out the rally from Karsaz to FTC flyover, and they had agreed to it.

“However, after reaching the FTC Bridge, the protesters were bent upon entering the Red Zone. This prompted the police to resort to baton charge, shelling and use water canon to disperse them,” he explained.

The senior official also said that the representatives of the provincial government and police officials held negotiations with the PSP leaders but to no avail.

The law, which prohibits the assembly of more than four people in an area, was put in place hours before the PSP had to start its march towards CM House.

A large number of anti-riot police personnel had already been deployed at the road and almost all roads leading to the city’s red zone had been sealed.

PSP chairman Mustafa Kamal had said on Saturday that he expected “one million” people to march towards the “palace of the Sindh chief minister” for their rights.

The rally was expected to move from the FTC building on Shahrah-e-Faisal. The rallying workers would register their protest against the ‘poor governance’ of the PPP government in Sindh, it had been announced.

Kamal had previously criticised the government for failing to pay any heed to his party’s 18-day sit-in outside the Karachi Press Club. “A government delegation contacted us twice but instead of resolving our issues they tried to befool people,” he had said at a press conference on Saturday.

At the time, the PSP chairman had said that the city’s Red Zone — where the Governor House, CM House, Sindh Assembly and other important government installations are located — was not a sacrosanct place where people could not lodge their protest.

 

کراچی ،15 مئی2017

Mustafa Kamal released after brief detention in Karachi

KARACHI: 

 

Pak Sarzameen Party (PSP) Chairman Mustafa Kamal and other party leaders was released from detention in the wee hours of Monday.

The Sindh government in a crackdown against Pak Sarzameen Party on Sunday arrested its chief Mustafa Kamal and scores of party activists.

Other prominent leaders including Raza Haroon, Anees Kaimkhani and Dr Sagheer Ahmed were also reportedly taken into custody.

ADVERTISEMENT
 
 

Clashes between the police and PSP workers broke out after the latter tried to march towards the Chief Minister House, breaching the red zone security.

In an effort to stop the rally from advancing further from the Aisha Bawany School, the police used water cannons, teargas shells and also opened aerial firing to disperse the participants.

Ending his sit-in outside the Karachi Press Club, the PSP chief had called for a ‘Million March’ to press the Sindh government to resolve the issues of the metropolis.

Million March: Can Mustafa Kamal prove his mettle today?

Speaking to the media on April 7, Mustafa Kamal had put forward 16 demands for the uplift of the city, vowing to continue his protest till they were met.

The PSP leaders held a meeting with a Pakistan Peoples Party delegation ahead of the rally, which ended without any consensus.

A PPP delegation including Murtaza Wahab, Rashid Rabbani and Waqar Mehdi met with PSP leaders— Raza Haroon, Dr Sagheer Ahmed, Aftab Iftikhar Alam, Muhammad Dilawar and Asif Memon.

Following the deadlock in negotiations, the Sindh government had imposed Section 144 of the Criminal Procedure Code (CrPC) in Karachi’s Red Zone hours before the rally was to commence.

In a press conference following the crackdown, PSP leaders Ashfaq Mangi and Asif Hasnain warned the Sindh government that the party activists would not go home till their leaders were released.

One million people will march for city’s uplift on May 14: Mustafa Kamal

Speaking at the party headquarters, Pakistan House, Hasnain said that PSP’s peaceful rally was unduly attacked.

“Many of the children in the rally have gone missing,” the PSP leader told the media.

He asked the federal government to intervene and take appropriate steps to defuse the situation.

“Today was democracy’s funeral,” Ashfaq Mangi stated.

He went on to say that the party did not aim to breach the red zone security and was only trying to hold negotiations with the Sindh government.

Reactions

PPP leader Murtaza Wahab took to Twitter to clarify the Sindh government’s stance.

Attaching a copy of the no-objection certificate, the PPP leader stated that the PSP activists attempted to go beyond the permitted area which was unlawful.

Interior Minister Chaudhry Nisar Ali Khan condemned the shelling on PSP rally.

Kamal rules out coalition with Sattar

In a statement issued to media he said that such a severe reaction on purely a peaceful political gathering was beyond imagination.

Interior minister also condemned Mustafa Kamal and other senior leaders’ arrest.

He said Pakistani law allows holding of peaceful demonstrations for resolving issues.

Criticising the Sindh government he said the provincial government has started violence against the persons who demand the rights for Karachi.

Pakistan Tehreek-e-Insaf’s Shah Mehmood Qureshi also strongly condemned the brutal use of force on “peaceful PSP rally for basic civil rights of the people of Karachi”.

 

کراچی ،15 مئی2017

Police release Mustafa Kamal, others after brief detention

KARACHI: Police have released Pak Sarzameen Party leaders Mustafa Kamal, Raza Haroon and Dr Sagheer after brief detention on Sunday

Police made the arrests earlier while shelling tear gas at protesters to stop them from reaching the Chief Minister House.

PSP Chairman Kamal said that the party workers had not entered Red Zone. At the time of his arrest, further adding that police is taking him into custody for demanding water for the children of Karachi.

According to police sources, authorities are considering to press charges against the party’s leadership comprising anti-terrorism clauses.

The other two leaders were shifted in a prison van after being taken into custody by the police authorities. PSP leader Anis Advocate has also been taken into custody.

Police also arrested more than 20 party workers. Anees Qaimkhani was hit by water canon, although party workers, later on, surrounded him to save him from any harm.

Speaking to the media, PSP leader Asif Hasnain said that they party was just demanding water for the city. Women and children were shelled with tear gas, he said, adding that the federal government should intervene in the matter.

Many of our workers, including two girls, are missing, he remarked.

Sindh has a dictatorial government, he added.  

During the clash PSP President Anees Qaimkhani was hit by water canon, although party workers, later on, surrounded him to save him from any harm.

Later on, while speaking to Geo News Qaimkhani said that he’s at a safe location with party workers.

The entire central leadership of PSP other than its Qaimkhani has been taken into custody.

Later, police uprooted the party’s camp at the FTC on Shahra-e-Faisal.

Police also used water cannon to disperse the crowd gathered near Aisha Bawany Academy.   

Police officials claimed that they took the action against the PSP rally because the party was only given permission to protest till East zone and the crackdown began when the protesters entered the South zone.

 

Interior Minister condemns arrest of PSP leaders

Meanwhile, Interior Minister Chaudhry Nisar Ali Khan condemned the arrest of the PSP leaders. Nisar said the action against a peaceful political rally is completely illogical.  

Police sources informed that more than 20 people have been arrested and shifted within the remits of Artillery Maidan police station.

Earlier, the talks between Pak Sarzameen Party and Pakistan Peoples`Party  failed to reach a breakthrough.

The PSP representatives said that the party would only re-enter into negotiations only when the authorities let its protestors gather outside the Chief Minister House. The four-member PPP delegation; included Murtaza Wahab, Rashid Rabbani and Waqar Mehdi and was led by Sindh Health Minister Dr Sikandar Ali Mandhro.

The negotiations were held near Aisha Bawany Academy.

‘No Red Zone for public’

Earlier PSP President Anis Qaimkhani said that there is no ‘Red Zone’ for the public. We will come out on the streets no matter what for the sake of our children’s future.

This was stated by Pak Sarzameen Party (PSP) President Anis Qaimkhani while addressing the media at his party’s protest camp at Shahrah-e-Faisal.

PSP planned to hold a ‘Million March’ on Sunday from Shahrah-e-Faisal to the Chief Minister House. The purpose of the rally — led by PSP chief and former city mayor Mustafa Kamal — is to press the provincial government to supply residents of the metropolis with basic necessities.

Speaking to the media, Qaimkhani claimed they had obtained permission for their rally. “Come 6pm they [Sindh government] won’t know what hit them as hundreds of thousands will be out on the streets.”

Earlier in the day, Commissioner Ejaz Ahmed Khan stated that a ban [Section 144] on assembly of persons in the Red Zone — where the Chief Minister House is situated — will be strictly enforced.  

As part of the PSP rally, protesters will gather near FTC bridge on Shahrah-e-Faisal to march to the CM House.

Police have finalised a traffic plan so that commuters do not face difficulties while travelling around the route of the rally. For instance, those coming from Korangi, Landhi and Defence will pass from Korangi Road, Korangi Industrial Area and then Shah Faisal Colony to go towards the airport.

The march is being held to protest against the authorities for not providing the public with basic necessities such as water and electricity. The demands are a part of a 16-point list that the party has put forward.

During a recent press conference, Kamal lashed out at the city mayor regarding the K-IV water project, saying the latter did not know where the water will come from and where it will go, with regards to the project.  

Read: Mustafa Kamal lashes out at Karachi Mayor over K-IV project

He also said PSP held an 18-day protest outside Karachi Press Club for the rights of the people. “We even held negotiations with the government, but our 16-point demand was not approved,” he remarked. “We just want the people to be provided with water, electricity and garbage disposal facilities.”

کراچی ،15 مئی2017

Police release Mustafa Kamal, other PSP leaders

KARACHI: Police released Pak Sarzameen Party chief Mustafa Kamal, other leaders Raza Haroon and Dr Saghir Ahmed after brief detention late on Sunday night.

Police on Sunday took Mustafa Kamal and others leaders into custody after resorting to baton charge and shelling to disperse PSP activists who tried to march towards the CM House.

Speaking to Geo News after detention, the PSP chief said he was being shifted to Kalakot police station. He said he had not entered the Red Zone. “I am being taken into custody for demanding water for the children of Karachi,” he said.

Police also detained Raza Haroon, Dr Saghir and over 10 PSP workers.  Police claimed that the PSP had not taken permission to enter the South Zone.

Earlier, police used tear-gas shells and water cannon to disperse PSP workers assembled near Aisha Bawany College. 

Meanwhile, reacting to the arrest of PSP leaders, Interior Minister Chaudhry Nisar Ali Khan said that the Constitution ensures provision of holding political gatherings.

Nisar condemned the use of power against the PSP leaders and workers.

کراچی ،15 مئی2017

PSP leader Mustafa Kamal, party workers released

Karachi: Police released Pak Sarzameen Party leaders Mustafa Kamal, Raza Haroon and Dr. Sagheer from detention in the early hours on Monday. The police had arrested the leaders along with other party workers since they were trying to enter Karachi’s red zone. The police shelled tear gas at protesters to try and stop them from reaching the CM house.

However, PSP Chairman Kamal claimed that the party workers had not entered Red Zone at the time of his arrest.He added that the arrests were made because the party was demanding water for the children of Karachi.

Talking to the media after his release, the PSP chairman condemned the use of force to disperse his party workers and said that the provincial government should be ashamed for arresting innocent citizens.

On Sunday, a heavy contingent of police resorted to baton charge and shelling to disperse hundreds of PSP activists as they tried to march towards the Chief Minister House. Hundreds of PSP activists had gathered at Shahrah-e-Faisal near FTC bridge after the provincial government imposed Section 144 of the Criminal Procedure Code (CrPC) in Karachi’s Red Zone on Sunday just hours before the announced march of the PSP to the Chief Minister House.

During the clash PSP President Anees Qaimkhani was hit by water cannon. The entire central leadership of PSP has been taken into custody. Later, police uprooted the party’s camp at the FTC on Shahra-e-Faisal.

 

کراچی ،15 مئی2017

PSP Chairman Mustafa Kamal among others arrested following clashes with Police

KARACHI: Pak Sarzameen Party (PSP) Chairman Syed Mustafa Kamal along with many of his party leaders and supporters were rounded up following clashes with law enforcement agencies in Karachi on Sunday evening, Samaa reported.

According to details, PSP supporters and police clashed with each other as they were marching from Shahrah-e-Faisal towards Chief Minister House.

Police fired tear gas shells in order to make the advancing protesters retreat.

The law enforcement agencies reported told the PSP protesters to not advance past Aisha Bawany School. They fired tear gas shells when the protesters failed to comply.

Speaking exclusively with Samaa TV, Mustafa Kamal said that the law enforcement agencies targeted unarmed protesters. He added that they were going to have their demands met.

“They made my job much easier. Now the protest will spread to every nook and corner of the city,” he added.

“I am being arrested for asking water for my children,” Kamal said while being arrested.

PSP leader Anees Advocate, in an interview with Samaa TV, said that he was with Kamal when the PSP chief was arrested. When being asked why he was not arrested, he replied that it might be a strategy of the government.

Advocate added that the party will announce its next strategy tomorrow.

PSP leader Dr. Sagheer Ahmed and Raza Haroon were also amongst the arrested person.

 

کراچی ،15 مئی2017

عوامی مسائل کے حل کے لیے سنی تحریک نے بھی ہمارا ساتھ دیا ہے، انیس ایڈوکیٹ
بنیادی مسائل کے حل کے لیے عوام سڑکوں پر ہیں ہم پی ایس پی کے احتجاج میں شامل ہیں اور تعاون کریں گے،رہنما سنی تحریک شاہد غوری

پی ایس پی کے سینئر وائس چیئر مین ا نیس ایڈوکیٹ نے کہاکہ عوامی مسائل کے حل کے لیے سنی تحریک نے بھی ہمارا ساتھ دیا ہے کراچی کے عوام آج ہمارے ساتھ سڑکوں پر ہیں انہوں نے کہاکہ حکمران کراچی کے عوام اور ان کو درپیش مسائل کا سمجھیں ہم حکمرانوں سے ان کی جائیداد نہیں مانگ رہے ان خیالات کااظہار انہوں نے ایف ٹی سی کے سامنے قائم استقبالیہ کیمپ میں موجود میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیاسنی تحریک کے رہنما شاہد غوری نے کہاکہ کراچی کے عوام کو بنیادی سہولیات سے محروم کیا ہوا ہے سندھ کے حکمران کراچی کے ساتھ سوتیلا سلوک کررہے ہیں انہوں نے کہاکہہ سندھ حکومت کو کراچی کے عوام سے کوئی غرض نہیں ہے بنیادی مسائل کے حل کے لیے عوام سڑکوں پر ہیں ہم پی ایس پی کے احتجاج میں شامل ہیں اور تعاون کریں گے

کراچی ،15 مئی2017

پاک سرزمین پارٹی کے زیر اہتمام کراچی کے مسائل کے حل کیلئے نکالے جانے والے’’ملین مارچ‘‘ کا آغازایف ٹی سی سے ہوا
ملین مارچ میں مختلف قومیتوں سے تعلق رکھنے والے افراد نے بڑی تعداد میں شریک ہیں

ُٓ پاک سرزمین پارٹی کے زیر اہتمام کراچی کے مسائل کے حل کیلئے نکالے جانے والے’’ملین مارچ‘‘ کا آغازایف ٹی سی سے کیا گیا۔۔ملین مارچ کے راستے میں ہیٹ اسٹروک سے بچاؤ کیلئے کمپس لگائے گئے تھے جہاں ٹھنڈاپانی فراہم کیا جارہا تھا۔ ریلی کے شرکاء ٹرکوں، بسوں، ویگن، کاروں، موٹر سائیکلوں، پر سوار تھے جنہوں نے ہاتھوں میں قومی پرچم تھام رکھے تھے اور پی ایس پی کے حق میں پرجوش نعرے لگارہے تھے۔ ملین مارچ میں مختلف قومیتوں سے تعلق رکھنے والے افراد نے بڑی تعداد میں شرکت کی اور جگہ جگہ انہوں نے اپنے روائتی رقص بھی کئے۔ ملین مارچ کے راستوں کوقومی کے پرچموں اوربنیادی مسائل سے متعلق بینرز سے انتہائی دیدہ زیب انداز میں سجایا گیا تھا۔ ملین مارچ میں خواتین نے پاکستان کے پرچم کی مناسبت سے ملبوسات زیب تن کئے ہوئے تھے۔ اسٹوڈنٹس فیڈریشن آٖف پاکستان سے تعلق رکھنے والے اسکولوں ، کالجوں اور یونیورسٹیوں کے طلبا و طالبات ہاتھوں میں پلے کارڈز لے کرجس پر جلی حروف میں ’’ کراچی کو پانی دو، مصطفی کمال ہم تمہارے ساتھ ہیں‘‘، کھڑے تھے۔ ملین مارچ میں بچوں اور بزرگوں کی بھی بڑی تعداد موجود تھی جن کا کہنا تھا کہ مصطفی کمال نے ہمارے بنیادی مسائل کے حل کیلئے آواز بلند کرکے بتادیا ہے کہ وہ سچے لیڈر ہیں اور اس شہر کے حقوق کیلئے ہم ملین مارچ کو کامیاب بنانے کیلئے آئے ہیں کیونکہ یہ ہماری آنے والی نسلوں کے مسقبل کی جد وجہد ہے

کراچی ،14 مئی2017

١٤مئی ظالم حکمرانوں کے مظالم سے یوم نجات ہوگا،مصطفی کمال
نئے دن کے ساتھ طلوع ہونے والا سورج امید کی نئی کرن لے کر آئے گا
کراچی کے عوام ایف ٹی سی پہنچیں کل شام چار بجے وزیراعلی کے محل کی طرف پرامن مارچ کریں گے
 کراچی کے ٹرانسپورٹرز سے ایف-ٹی- سی برج تک مفت ٹرانسپورٹ فراہم کریں، مصطفی کمال کی اپیل

کراچی ( )پاک سر زمین پارٹی کے چیئر مین سید مصطفی کمال نے کہا ہے کہ ہم نواز شریف سے سوال کرتے ہیں کہ کیا آپ پاکستان کے وزیراعظم ہیں یاصرف پنجاب کے؟ کر اچی ملک کو 70فیصدسرمایہ دیتا ہے اس کے ابتر حالات کی بہتری کیلئے وزیرا عظم نے کوئی کردار ادا نہیں کیا، ہمارے جائز مطالبات پر ہمارے پاس کوئی نہیں آیا، اب وقت گزر گیا مسائل کے حل کے لیے اب وزیراعلی کے محل کی طرف ملین مارچ ہوگا،عوام ہمارے ساتھ ہیں کل کا دن حکمرانوں کے مظالم سے یوم نجات ہوگا،نئے دن کے ساتھ طلوع ہونے والا سورج امید کی نئی کرن لے کر آئے گا، اگر 10 لاکھ لوگ نکل پڑے تو حکمران ہمارے حقوق دینے پر مجبور ہو جائیں گے،کل احتجاج میں تمام برادری، مذہب، فرقے اور مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد بڑی تعداد میں شرکت کریں گے عوام کا سمندرکرپٹ حکمرانوں کو بہا لے جائے گا. ہم کوئی سیاسی پوائنٹ اسکورنگ نہیں کر رہے یہ عوام کے بنیادی مسائل کا حل چاہتے ہیں،حکمرانوں نے ہمیں ٹکڑوں میں بانٹ دی تھا لین ہم متحد ہو چکے ہیں صرف عوامی مسائل پر سیاست ہو گی، ہم نے بار بار حکومت سے عوامی مسائل کے حل کے لیے رابطہ کیاچھ اپریل کو سولہ نکاتی ایجنڈا پیش کیا ملکی تاریخ میں پہلی بار پی ایس پی کی قیادت نے اٹھارہ روزپریس کلب کے باہر فٹ پاتھ پر گزارے دو بار حکومت وفد نے رابطہ کیالیکن مسائل حل کرنے کی بجائے ٹوپی ڈرامہ کرنے کی کوشش کی گئی، ریڈ زون ایسی معتبر جگہ نہیں جہاں انسان اپنے حقوق نہ ملنے پر احتجاج نہیں کر سکتے پانی مانگنا جرم ہے تو ہر ظلم سہنے کے لیے پی ایس پی کی قیادت تیار ہے ان خیالات اظہار انہوں نے پی ایس پی کے مرکزی دفتر پاکستان ہاوئس میں ایک پرہجوم پریس کانفرنس سے خطاب کر تے ہوئے کیا۔ اس موقع پر سیکریٹری جنرل رضاہارون، سینئر وائس چیئر مین انیس ایڈوکیٹ و دیگر قائدین اور مختلف شعبہ جات کے ذمہ داران موجود تھے۔ انہوں نے کہا کہ میں اپنے سولہ نکاتی ایجنڈے سے پیچھے ہٹ کر اپنی اور کراچی کے شہریوں کی زندگیوں سے نہیں کھیل سکتا18روز میں شہر کے ایک ایک گھراپنا پیغام پہنچاکر شہریوں کو جنھجوڑا، شہری اداروں پر سندھ حکومت قابض ہے ہم نے جو کہا اس پر عمل نہ ہوا تو لوگ اس شہر کو چھوڑنے پر مجبور ہوجائینگے انہوں نے کہاکہ حکمران کمزور اور بزدل ہیں کیونکہ وہ ظالم ہیں شہریوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہاکہ میں انتظار کروں گا آپ ایف ٹی سی پہنچیں کل شام چار بجے وزیراعلی کے محل کی طرف پرامن مارچ کی جائیگی کل یوم نجات ہے او ہمارا ساتھ دیں آنے والے کل کے مستقبل کے لیے .انہوں نے کہاکہ سندھ حکومت وفاق سے اختیارات اور این ایف سی ایوارڈ لیتی ہے لیکن شہری انتظامیہ کو اختیارات اور وسائل منتقل نہیں کرتی لیکن اب کراچی کے لوگ فیصلہ کر چکے ہیں کہ مرنا ہی ہے تو سسک سسک کے نہیں بلکہ ایک ہی مرتبہ مریں گے کراچی کے بیشتر علاقوں میں مہینوں پانی نہیں آتا،ان حالات میںآرمی کے آپریشن کر نے سے دہشتگردی ختم کیسے ہو گی جب کہ لوگ پیاس اور بھوک سے مر رہے ہیں اگر ہم سب ظلم پر خاموشی سے مر گئے تو ہماری قبروں پر بھی عذاب اترے گا،ہم جینے کے بنیادی حقوق مانگ رہے ہیں انہوں نے کہاکہ وزیر اعلٰی کو پانی کی لائنوں کا اختیارات چاہیے تو یوسی ناظم بن جائیں، میں نے یہ شہر بنایا ہے مجھے پتہ ہے یہ کیسے ٹھیک ہو گا. اگر ہمارے 16 مطالبات نہیں تسلیم کئے گئے تو کراچی رہنے کے قابل نہیں رہے گا.انہوں نے کہاکہ کراچی کے ٹرانسپورٹرز سے اپیل کرتا ہوں کہ FTC برج تک مفت ٹرانسپورٹ فراہم کریں. رکشہ، ٹیکسی ڈرائیور سب اپنے علاقوں سے عوام کو لے کر آئیں انہوں نے کہاکہ کراچی کی عوام کا پانی انہی کی لائنوں سے چوری کر منرل واٹر کے نام پربیچا جارہا ہے، ایک مرتبہ اختیارات میئر کے دفتر منتقل ہو جائیں مئیر سے کام ہم کروا لیں گے وسیم اختر کے لئے نہیں عوام کے میئر آفس کے لئے اختیارات مانگ رہے ہیں۔

کراچی ،14 مئی2017

پاک سرزمین پارٹی کے چیئر مین سید مصطفی کمال نے کراچی کے امیر حافظ نعیم الرحمان سے جماعتِ اسلامی کے مرکزی دفتر ادارو نورِ حق میں ملاقات
14مئی کو ہونے والے ملین مارچ میں شرکت کی دعوت دی
ہم سیاست نہیں عبادت کررہے ہیں عوام کی خدمت ہی ہمارا مقصد اور منشور ہے، مصطفی کمال
جو مطالبات پاک سرزمین پارٹی نے پیش کئے ہیں اس کی ہم بالکل تائید کر تے ہیں، حافظ نعیم الرحمان

پاک سرزمین پارٹی کے چیئر مین سید مصطفی کمال نے کراچی کے امیر حافظ نعیم الرحمان سے جماعتِ اسلامی کے مرکزی دفتر ادارو نورِ حق میں ملاقات کی اور انہیں 14مئی کو ہونے والے ملین مارچ میں شرکت کی دعوت دی اورکراچی کے مسائل پر پیش کیے جانے والے 16 نکات پر تفصیلی بات چیت ہوئی ۔اس مو قع پرپی ایس پی کے وائش چیئر مین، وسیم آفتاب، سیف یار خان، محمددلاور اور دیگر رہنما ان کے ہمراہ موجودتھے۔اس مو قع پرجماعتِ اسلامی کے مرکزی دفتر ادارو نورِ حق میں میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کر تے ہوئے پی ایس پی کے چیئر مین سید مصطفی کمال نے ہم سیاست نہیں عبادت کررہے ہیں عوام کی خدمت ہی ہمارا مقصد اور منشور ہے۔انہوں نے کہاکہ 14مئی پاکستان میں نئی تاریخ رقم کرے گی جس میں تمام قومیتوں، مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والے افراد بڑی تعداد میں شرکت کریں گے اور اس ملین مارچ کو کامیاب کرائیں گے۔کراچی کے امیر حافظ نعیم الرحمان نے کہاکہ ہم مصطفی کمال کی کوشوں کو سراہتے ہیں اور جو مطالبات پاک سرزمین پارٹی نے پیش کئے ہیں اس کی ہم بالکل تائید کر تے ہیں

 

کراچی ،13 مئی2017

پاک سرزمین پارٹی کے چیئر مین سید مصطفی کمال کی ممتاز عالم دین علامہ طالب جوہری سے ان کی رہائش گاہ انچولی میں ملاقات
14 مئی کو ایف ٹی سی برج سے ملین مارچ کا آغاز کریں گے اور اپنے حقوق لے کر رہیں گے ، مصطفی کمال
کراچی میں زبان، فرقہ رنگ ونسل سے بالا تر ہو کر عوامی مسائل کو حل کیا جائے، مصطفی کمال
کراچی کے عوام کو درپیش مسائل کے حل کیلئے پہلی بار کسی سیاسی جماعت نے جدوجہد کا آغاز کیا ہے، علامہ طالب جوہری
علامہ طالب جوہری نے مصطفی کمال کو امام ضامن باندھ کر اپنی دعاؤں کے ساتھ رخصت کیا

پاک سرزمین پارٹی کے چیئر مین سید مصطفی کمال نے ممتاز عالم دین علامہ طالب جوہری سے ان کی رہائش گاہ انچولی میں ملاقات کی اور انہیں 14مئی کو ہونے والے ملین مارچ میں شرکت کی دعوت دی اورکراچی کے مسائل پر پیش کیے جانے والے 16 نکات پر تفصیلی بات چیت ہوئی ۔اس مو قع پرپی ایس پی کے صدر انیس قائم خانی، وسیم آفتاب، افتخار رندھاوا، سیف یار خان، ارتضی فاروقی اور دیگر رہنما ان کے ہمراہ موجودتھے۔اس مو قع پر میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کر تے ہوئے پی ایس پی کے چیئر مین سید مصطفی کمال نے کہاکہ14 مئی ملین مارچ کے حوالے سے علامہ طالب جوہری کی دعائیں لینے اور دعوت دینے آئے ہیں کیونکہ علامہ طالب جوہری سے بہت پرانا تعلق ہے اور ہمارے پیش کے گئے مطالبات پر انہوں نے ہمارے موقف کی تائید کی ہے انہوں نے کہاکہ پاکستان کے سب بڑے شہر کو درپیش مسائل کیلئے ہم حکومت سے مطالبہ کررہے ہیں کہ انہیں حل کیا جائے اور14 مئی کو ایف ٹی سی برج سے ملین مارچ کا آغاز کریں گے اور اپنے حقوق لے کر رہیں گے ہم چاہتے ہیں کہ کراچی میں زبان، فرقہ رنگ ونسل سے بالا تر ہو کر عوامی مسائل کو حل کیا جائے ۔اس موقع پر ممتاز عالم دین علامہ طالب جوہری نے کہاکہ کراچی کے عوام کو درپیش مسائل کے حل کیلئے پہلی بار کسی سیاسی جماعت نے جدوجہد کا آغاز کیا ہے جو بھی کراچی کی بہتری اور عوام کی فلاح و بہبود کیلئے کوشش کرے گا اس کا ساتھ دیں گے انہوں نے کہاکہ مصطفی کمال کراچی کے بیٹے ہیں انہوں نے ماضی میں بھی اس شہر کو دنیا کا بہترین شہر بنایا تھا۔ملاقات کے بعد علامہ طالب جوہری نے مصطفی کمال کو امام ضامن باندھ کر اپنی دعاؤں کے ساتھ رخصت کیا

 

کراچی ،13 مئی2017

تھر پا رکر میں غذائی قلت کے باعث سول اسپتال میں زیر علاج چار بچوں کے انتقال پرانیس قائم خانی کا اظہار افسوس
صوبائی حکومت اس مسئلے پر قابو پانے میں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے،
صوبائی حکومت کے پاس اپنے ممبران کے گھروں کی تزئین و آرائش کیلئے تو کافی رقم موجود ہے لیکن نہیں ہے تو صرف تھر کے لوگوں کے لئے کچھ نہیں،انیس قائم خانی صدر پی ایس پی

کراچی ()پاک سرزمین پارٹی کے صدر انیس قائم خانی نے تھر پا رکر میں غذائی قلت کے باعث سول اسپتال میں زیر علاج چار بچوں کے انتقال پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ہے اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ تھر کے علاقہ میں قحط و خشک سالی اور پینے کا صاف پانی نہ ملنے کے باعث سینکڑوں معصوم جانوں کی ہلاکتیں ایک بہت بڑا انسانی المیہ ہے اوریہ معاملہ یہیں ختم نہیں ہوا ہے بلکہ موت کا رقص اب بھی جاری ہے رواں سال ہلاکتوں کی تعداد 125ہو گئی ہے انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت کو انسانی ہمدردی کی بنیاد پر تھر کے قحط زدگان کی مدد کرنی چاہیے لیکن صوبائی حکومت کے اقدامات کہیں نظر نہیں آ رہے جو کہ سندھ حکومت کی کارکردگی پر سوالیہ نشان ہے انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت اس مسئلے پر قابو پانے میں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے اور وفاقی حکومت نے بھی اس سلسلے میں کوئی خاطر خواہ اقدامات نہیں کیے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت کے پاس اپنے ممبران کے گھروں کی تزئین و آرائش کے لئے توکافی رقم موجود ہے لیکن نہیں ہے تو صرف تھر کے لوگوں کے لئے کچھ نہیں جس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے۔

==================

صوبہ بلوچستان کے شہر مستونگ میں ڈپٹی چیئرمین سینیٹ عبدالغفور حیدری کے قافلے کے قریب دھماکے کے واقعہ پر رضا ہارون کا اظہار مذمت
دھماکے کے نتیجے میں متعدد افراد کے جاں بحق و زخمی ہونے پر گہرے دکھ ااور افسوس کا ظہار

کراچی () پاک سر زمین پارٹی کے سیکریٹری جنرل رضاہارون نے صوبہ بلوچستان کے شہر مستونگ میں ڈپٹی چیئرمین سینیٹ عبدالغفور حیدری کے قافلے کے قریب دھماکے کے واقعہ کی سخت ترین الفاظ میں مذمت کی ہے اور دھماکے کے نتیجے میں متعدد افراد کے جاں بحق و زخمی ہونے پر گہرے دکھ اور افسوس کا ظہار کیاہے، اپنے ایک بیان میں انہوں نے وزیراعظم پاکستان میاں نواز شریف، صدر پاکستان ممنون حسین اور وفاقی وزیر داخلہ سے مطالبہ کیاہے کہ مستونگ میں دھماکے کا نوٹس لیا جائے اور اس میں ملوث ذمہ داروں کو فوری گرفتارکرکے قانون کے مطابق سخت سے سخت سزا دی جائے او حکومت بلوچستان زخمیوں کے بہتر علاج معالجے کا فوری بندوبست کرے۔ انہوں نے بم دھماکے میں زخمی ہونے والے افراد کے لئے جلد ومکمل صحت یابی کیلئے بھی دعا کی۔

 

===============

پاک سرزمین پارٹی کراچی ڈیژن کے صدر آصف حسنین کی سربراہی میں وفدکی پاکستان گڈز ٹرانسپورٹ الانئس کے احتجاجی کیمپ میں شرکت
ٹرانسپورٹ کانظام اور اس کے لئے در کار سہولیت کی فراہمی بنیادی طور پر حکومت کی ذمہ داری ہے، آصف حسنین
وفاقی حکومت اپنی ذمہ داری کا احساس کر تے اس معاملے میں فوری مداخلت کرے،
اگر اس احتجاج نے طو الت اختیار کی تو اس کے اثرات سے پورا ملک متاثر ہو گا کیونکہ پورے ملک میں اشیا ء ضروت کی ترسیل بند ہو جائے گی، آصف حسنین

کراچی ()پاک سرزمین پارٹی کراچی ڈیژن کے صدر آصف حسنین کی سربراہی میں وفدنے پاکستان گڈز ٹرانسپورٹ الانئس کے احتجاجی کیمپ میں شرکت کی۔اس موقع پر نیشنل کونسل کے رکن محمددلاور،کراچی ڈویژن کے سینئر نائب صدر عادل صدیقی اوردیگر بھی موجود تھے، احتجاجی کیمپ کے شرکا ء سے گفتگو کر تے ہوئے کراچی ڈیژن کے صدر آصف حسنین نے کہاکہ ٹرانسپورٹ کانظام اور اس کے لئے در کار سہولیت کی فراہمی بنیادی طور پر حکومت کی ذمہ دارای ہے لیکن حکومت اپنے ذمہ داریوں کو ادا کرنے کے بجائے دوسروں کو اس کا ذمہ دارٹہراتی ہے جبکہ ان مسائل کا حل نہ صرف صوبائی بلکہ وفاقی حکومت کی بھی ذمہ داری ہے اگر اس احتجاج نے طو الت اختیار کی تو اس کے اثرات سے پورا ملک متاثر ہو گا کیونکہ پورے ملک میں اشیا ء ضروت کی ترسیل بند ہو جائے گی۔ انہوں نے کہاکہ صو بائی حکومت مکمل لاپرواہی کا مظاہرہ کررہی ہے لہذا وفاقی حکومت اپنی ذمہ داری کا احساس کر تے اس معاملے میں فوری مداخلت کرے اس کے ساتھ ساتھ شہری حکومت اور موجودہ مئیر کو بھی اپنی ذمہ داریوں کو احساس ہونا چاہیے ۔انہوں نے کہاکہ میں پاک سرزمین پارٹی کے چیئر مین مصطفی کمال اور صدر انیس قائم خانی کی طرف سے اس بات کی یقینی دہانی کراتاہوں کہ اگر تمام متعلقہ لوگ اپنی ذمہ داریوں کا احساس کریں گے تو تمام تر سیاسی مخالفتوں کے باوجود پاک سر زمین پارٹی اپنا مکمل تعاون فراہم کرے گی ۔

===================

 

کراچی ،11 مئی2017

ظلم کیخلاف آواز لگائے بغیر مر گئے تو ہم سے سوال ہوگا ، مصطفی کمال
کچرا صفائی، پانی، بجلی گیس ٹرانسپورٹ مانگ رہے ہیں جو ہمارے بنیادی حق ہے
شہر کراچی اور پورے پاکستان کے عوام کیلے مصطفی کمال کی خدمات کسی تعارف کی محتاج نہیں ، شاہ عبدالحق قادری
جماعت اہلسنت کراچی کے حقوق کیلئے آواز بلند کرنے والوں کے ساتھ ہے،
مصطفی کمال نے اس شہر کو دیکھنے کے لائق شہر بنایا تھااوراس شہر کی حالت زار دیکھ کو دکھ اور افسوس ہوتا ہے، حاجی حنیف طیب

کراچی ()پاک سرزمین پارٹی کے چیئر مین سید مصطفی کمال نے کہاکہ کچرا صفائی، پانی، بجلی گیس ٹرانسپورٹ مانگ رہے ہیں جو ہمارے بنیادی حق ہے ، 18 راتیں اس شہر کے عوام کیلے پریس کلب کے باہر فٹ پاتھ پر گزاری اورہم نے تمام اختلافات کے باوجود مئیر کراچی کیلئے بھی اختیارات مانگ رہے ہیں ان خیالات اظہار انہوں نے جماعت اہلسنت کے سربراہ شاہ عبدالحق قادری , حاجی حنیف طیب کے ہمراہ جماعت اہلسنت کے مرکزی دفترمیں میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہاکہ ہمارے شہر کا پانی ہمیں ہی بیچا جا رہا ہے کامیابی ناکامی اللہ کے ہاتھ میں ہے، ہم صرف اپنے حصے کا کام کر رہے ہیں اس خاندان سے پوچھیں جس کے گھر پانی نہیں بجلی اور گیس کی بندش ہے، وہ اپنی ضروریات زندگی کس طرح پوری کرے، انہوں نے کہاکہ شاہ صاحب سے دعا کروانے اور ان کے چاہنے والوں کو دعوت دینے کیلئے آئے ہیں اس شہر میں ہوا بیچی جارہی ہے، آن والے وقتوں میں یہ شہر رہائش کے لائق نہیں رہے گا۔ا نہوں نے کہاکہ شاہ عبدالحق قادری اور ان کے رفقا کے شکر گزار ہیں جنہوں نے ہماری بات سنی اور ہمارے موقف کو سنا۔ اس مو قع پرجماعت اہلسنت کے سربراہ شاہ عبدالحق قادری نے کہاکہ پی ایس پی کے چیئرمین سید مصطفی اور دیگر رہنماؤں کو کراچی کے مسئلے کو اجاگر کرنے پر مبارکباد پیش کرتا ہوں اورشہر کراچی اور پورے پاکستان کے عوام کیلے مصطفی کمال کی خدمات کسی تعارف کی محتاج نہیں اور شہر میں حالات مصنوعی ہیں اور انہیں عوام پر مسلط کردیا گیا ہے ہمارے گھر خود پانی نہیں آتا اورحکومت بیدار نہیں ہوء تو پیپلز پارٹی لاڑکانہ تک محدود ہوجائے گی اور ایم اے جناح روڈ پر کیبل وائر اور کچرے کا ڈھیر جگہ جگہ ہے کوئی حکومتی ادارہ توجہ نہیں دیتا انہوں نے کہاکہ جماعت اہلسنت کراچی کے حقوق کیلئے آواز بلند کرنے والوں کے ساتھ ہے اورآپ کے مطالبات اور ملین مارچ پر اپنا موقف جلد آپ کو پیش کریں گے، حاجی حنیف طیب نے کہاکہ مصطفی کمال نے اس شہر کو دیکھنے کے لائق شہر بنایا تھااوراس شہر کی حالت زار دیکھ کو دکھ اور افسوس ہوتا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ ہم چاہتے ہیں کے کراچی کے مسائل حل ہوں، پی ایس پی کے مطالبات شہریوں کی آواز ہیں۔

کراچی ،11 مئی2017

سرکاری ملازمین کی جبری بے دخلی کے خلاف تین ہٹی پرسرکاری کوارٹرز کے رہائشیوں کے ا حتجاجی مظاہرہ
میں پی ایس پی کے سینئر وائس چیئرمین ڈاکٹر صغیر احمد کی قیادت میں چاررکنی وفد کی شر کت
سرکاری ملازمین نے اپنی ساری زندگی ملک و قوم کی تعمیر و ترقی میں صرف کی ہے اور سرکاری کواٹرزسے
جبری بے دخلی سراسر ظلم ہے، ڈاکٹر صغیر احمد، وسیم آفتاب

سرکاری ملازمین کی جبری بے دخلی کے خلاف تین ہٹی پرسرکاری کوارٹرز کے رہائشیوں کے ا حتجاجی مظاہرہ میں پی ایس پی کے سینئر وائس چیئرمین ڈاکٹر صغیر احمد کی قیادت میں چاررکنی وفد کی شر کت۔ پی ایس پی کے وفد میں پی ایس پی کے وائس چیئرمین وسیم آفتاب ،نیشنل کونسل کے ارکان شاکر علی، محمد دلاور سمیت سینئر پی ایس پی رہنماء بھی ان کے ہمراہ موجود تھے۔ اس مو قع پر سینئر وائس چیئرمین ڈاکٹر صغیر احمداور وائس چیئر مین وسیم آفتاب نے کہاکہ سرکاری ملازمین نے اپنی ساری زندگی ملک و قوم کی تعمیر و ترقی میں صرف کی ہے اور سرکاری کواٹرزسے جبری بے دخلی سراسر ظلم ہے ۔ انہوں نے کہاکہ سرکاری کوارٹرز کے رہائشیوں کو مالکانہ حقوق دیئے جائیں اورحکومت سرکاری ملازمین کی سرکاری کوارٹرز سے جبری بے دخلی فی الفور بند کرے.

 

کراچی ،10 مئی2017

مصطفی کمال نے پارٹی کے جھنڈے کے نام پر لوگوں کو مروانا نہیں ہے اس لیے قومی جھنڈے کو اٹھایا، مصطفی کمال
اپنے حقوق حاصل کرنے کیلے ہم تمام قومیتوں کے لوگ پاکستانی بن جائیں مصطفی کمال
١٤مئی حکمرانوں سے اپنے لیے اختیارات لینے کا دن ہے

کراچی ()چیئرمین پی ایس پی سید مصطفی کمال نے کہاکہ مصطفی کمال کی جماعت کو ووٹ ملا تو پھر بھی اپنے بچوں کو حلال کما کر کھلاؤں گاسیاست ہمارے لیے کمائی کا ذریعہ ہرگز نہیں ہے ،میں مہاجر ہوں لیکن اگر مہاجروں کو جمع کر کے سیاست کی تو اور قومیتوں کو اپنا دشمن بنا لوں گا،پختونوں کا نام لے کر سیاست کرنے والا ان کو خیر خواہ نہیں ہوسکتا ،قلعے بنا کر نہیں رہ سکتے، مہاجر، پنجابی، پٹھان اور سندھی ایک دوسرے سے تعلقات بنائیں ،پختون مہاجروں کو گلے لگائیں، مہاجر پختونوں کو بلوچی سندھی اور پنجابیوں کو گل لگائیں ،کیماڑی لیاری اور چکرا گوٹھ کے رہائشی لیاقت آباد کورنگی اورنگی جاکر ایک دوسرے سے ملتے ہیں اپنے حقوق حاصل کرنے کیلے ہم تمام قومیتوں کے لوگ پاکستانی بن جائیں اورمصطفی کمال نے پارٹی کے جھنڈے کے نام پر لوگوں کو مروانا نہیں ہے اس لیے قومی جھنڈے کو اٹھایا ان خیالات اظہار انہوں نے 14مئی کے سلسلے میں جاری عوامی رابطہ مہم کے مو قع پرپاک سرزمین پارٹی کے زیر اہتمام کیماڑی ٹاؤن میں منعقدہ عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہاکہ14 مئی حکمرانوں سے اپنے لیے اختیارات لینے کا دن ہے شاہراہ فیصل پر جب مصطفی کمال اور پی ایس پی کے کارکنان کی وجہ سے ٹریفک جام ہوا تو عوام پریشان ہوں گے آپ کو اپنے بچوں کیلئے تھوڑی تکلیف برداشت کرنے کرنا پڑے گی انہوں نے کہاکہ آپ تمام لوگوں کو اتحاد کے ساتھ ملین مارچ میں آنا ہے اور ہمارے ساتھ چلنا ہے آپ سب کواپنا ایک دن قربان کرنا پڑے گا،انہوں نے کہاکہ اس اجتماع کا مقصد ووٹ مانگنا اور الیکشن کی مہم چلانا نہیں ہے کراچی پورے ملک کو پالنے والا شہر ہے لیکن یہاں کے شہری پانی، بجلی گیس اور دیگر بنیادی وسائل سے محروم ہیں اور پاکستان میں لوگ وزیر اعظم، اور منسٹر بننے کیلئے پارٹیاں بناتے ہیں انہوں نے کہاکہ مصطفی کمال اپنے لیے نہیں آپ عوام کیلے آواز لگا رہا ہے اس شہر میں بجلی پانی گیس کی لوڈ شیڈنگ ہے، نوجوان ڈگریاں لیے نوکریاں تلاش کرتے ہیں انہون نے کہاکہ عوام کی فلاح و بہبود کے فیصلے نہ کرنے پر سابقہ جماعت کو چھوڑا ،906 ارب روپے صوبائی حکومت نے خرچ کر دیے لیکن یہاں 9 ماڈل اسکول اور اسپتال نہیں ہیں انہوں نے کہاکہ خاموشی سے مر جاتے تو اللہ ہم سے حساب لیتا کہ جب پردے ہٹائے تو مصطفی کمال نے عوام کو سچائی کیوں نہیں بتائی اورحکمرانوں سے صاف پانی، سستی بجلی، ٹرانسپورٹ کا نظام مانگ رہے جسے دینے کا انہوں نے حلف اٹھایا ہے انہوں نے کہاکہ عوام متحد ہوکر آواز لگائیں گے تو کرپٹ مافیا کو عوام کے حقوق دینا پڑیں گے مصطفی کمال نے کراچی کے جزیروں تک پانی پہنچایا اورمصطفی کمال نے اس شہر میں نظامت کی، لیکن ایک شادی ہال، پلاٹ اور پٹرول پمپ نہیں نکال سکتے اس شہر میں آج منسٹرز کے غیر قانونی شادی ہال گرائے جا رہے ہیں انہوں نے کہاکہ ہمارا سیاسی مخالف بھی ہمارا بھائی ہے اس کی حفاظت کرنا ہمارا فرض ہے اختلافات کو دشمنی میں نہیں بدلنا، مذہب، سیاست اور قومیت کو بالائے طاق رکھنا ہے اچھے مستقبل کیلئے اللہ تعالٰی کو راضی کرنا ہوگا اورکوئی مصطفی کمال کی بات نہ مانے لیکن گلے مل کر اٹھیں، انہوں نے کہاکہ مودی سے بات کرنے کا کہا جاتا ہے لیکن آپس میں سیاسی مخالفین ایک دوسرے سے بات نہیں کرتے اورمصطفی کمال آیندہ آنے والے سال تک سینیٹر تھا، 6 ماہ کی سینیٹر شپ کو عوام کی خاطر چھوڑ دیا اورالطاف حسین جیسے جابر سے لڑنے کی ہمت اللہ نے دی، جان لینا اور عزت دینا اللہ کے ہاتھ میں ہے انہوں نے کہاکہ انسان کی زندگی ڈینگی مچھر کے کاٹنے سے بھی ختم ہو جاتی ہے لیکن عوام کو سچ بتانے اور اپنے حصے کی آواز لگانے کیلے واپس آیا انسان کا کام حق و سچ کی آواز لگانا ہے انہوں نے کہاکہ3 مارچ کو ہم دو انسان تھے اور آج کراچی، اندرون سندھ، خیبر پختون خواہ، بلوچستان پنجاب، گلگت، کشمیر میں پاک سرزمین موجود ہے دنیا بھر میں جہاں کہیں پاکستانی آباد ہیں وہاں پی ایس پی موجود ہے

کراچی ،10 مئی2017

ایک قومی نظریہ کی سب سے زیادہ ضرورت کراچی میں ہے، مصطفی کمال
پانی صرف مہاجروں کے گھروں میں نہیں دیگر قومیتوں کے گھروں میں بھی جائے گا، مصطفی کمال
کراچی کے مسائل کے حل کیلئے مصطفی کمال کے پیش کردہ نکات ہماری بھی آواز ہے،امیر کراچی قاری عثمان 
جی یو آئی(ف) پاک سرزمین پارٹی کے ملین مارچ کی مکمل حمایت کرتی ہے، قاری عثمان 

چیئرمین پی ایس پی سید مصطفی کمال نے کہا ہے کہ سیاست سے بالاتر تر ہوکر لوگوں کو آواز دے رہے ہیں، ایک قومی نظریہ کی سب سے زیادہ ضرورت کراچی میں ہے،پانی صرف مہاجروں کے گھروں میں نہیں دیگر قومیتوں کے گھروں میں بھی جائے گا،14 مئی کو کراچی کے تمام عوام کے لیے وسائل لینے کیلئے نکلیں گے،این ایف سی ایوارڈ کے تحت ملنے والی گرانٹ پر صوبے کا وزیر اعلی قابض ہے، صوبائی فنانس کمیشن بنایاجائے تاکہ شہروں کو وسائل منتقل ہوں ان خیالات اظہار انہوں نے جے یو ائی (ف) کراچی کے امیر قاری عثمان اور بعد ازاں مجلسِ وحدت مسلمین کے ڈپٹی سیکریٹری جنرل مولانا اقبالیات احمد و دیگر رہنماؤں سے انکے مرکزی دفاتر میں ملاقات اور میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کر تے ہوئے کیا۔ اس پر مو قع پر پی ایس پی سیکریٹری جنرل رضا ہارون،وائس چیئر مین وسیم آفتاب اور محمد دلاور بھی موجود تھے انہوں نے کہاکہ مصطفی کمال مراعات یافتہ طبقے میں شامل تھا لیکن ہم نے اپنے لوگوں کی خاطر عہدوں کو لات ماری کراچی کے کئی علاقوں میں ہفتوں تک پانی نہیں آتا اورنگی ٹاؤن، کورنگی سمیت دیگر علاقوں میں کچرے کہ ڈھیر لگے ہوئے ہیں کوئی پرسان حال نہیں اس شہر میں لاکھوں پنجابی، سندھی، پختون اور بلوچ آباد ہیں، مہاجر کا نعرہ لگانے دے دیگر کی تذلیل ہوگی انہون نے کہاکہ ڈھائی کروڑ لوگوں کا مسئلہ ہے، بیان دینا میرا کام ہے کام کروانا وزیر اعلی اور گورنر کا کام ہے اگر انہوں بے اپنی ذمہ داریاں نبھائی تو عوام انہیں یاد رکھیں گے انہون نے کہاکہ جی یو آئی (ف) نے ہمارے پیش کردہ نکات کی مکمل تائید و حمایت کا اعلان کیا جس پر ہم ان کے شکریہ ادا کرتے ہیں جے یو ائی (ف) کراچی کے امیر قاری عثمان نے کہاکہ کراچی شہر گندگی کا ڈھیر بن گیا ہے، بجلی کے ساتھ ساتھ گیس کی بھی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ ہونے لگی ہے کراچی کے مسائل کے حل کیلئے مصطفی کمال کے پیش کردہ نکات ہماری بھی آواز ہے انہوں نے کہاکہ جی یو آئی(ف) پاک سرزمین پارٹی کے ملین مارچ کی مکمل حمایت کرتی ہے اوراس شہر اور ملک کے خیر خواہوں کو اکھٹا کرنے کیلئے جی یو آئی (ف) بھی اپنا کردار ادا کرے گی۔انہوں نے کہاکہ نیک مقصد کیلے مصطفی کمال نے جدوجہد کا آغاز کیا ہے اور مسائل کیلے دھرنا دیااورجہاں پر عوام کے مسائل کی بات ہوگی ہم اس پر ان کا ساتھ دیں گے انہوں نے کہاکہ مصطفی کمال نے ہمارے دفتر آکر ہمیں عزت بخشی انہیں خوش آمدید کہتے ہیں۔ 
اسطر ح چیئرمین پی ایس پی سید مصطفی کمال مجلس وحدت مسلمین کے مرکزی دفتر میں ایم ڈبلیو ایم کے رہنما مولان اقبال احمد اور کے دیگر رہنماؤں سے ملاقات کے بعد مجلس وحدت مسلمین کے مرکزی دفتر میں میڈیانمائندوں گفتگو کر تے ہوئیسید مصطفی کمال نے کہاکہ پی ایس پی نے کراچی کے شہریوں کے مسائل پر ملین مارچ کا اعلان کیا ہے کے الیکٹرک نے کراچی کے عوام کی جیبوں ہر 100 ارب روپے کا ڈاکہ ڈالا ہے انہوں نے کہاکہ ہم نے آواز لگائی ہے، زبان مسلک اور زنگ و نسل کو بالائے طاق رکھ کر جدوجہد شروع کی ہے اورآپس کے تفرقے کو ختم کرکے ان جابر اور ظالم حکمرانوں سے اپنے حقوقِ حاصل کریں لیکن14 مئی کو اپنے قیمتی وقت سے سپنے بچوں کے قیمتی و روشن مستقبل کیلئے ہمارے قافلے میں شامل ہوں مجلس وحدت مسلمین کے رہنمامولانا اقبال احمدنے کہاکہ کراچی ہے شہریوں کے حقوق کیلئے جدوجہد کرنے والوں کا ساتھ دیں گے اورایم ڈبلیو ایم پاک سرزمین پارٹی کے 16 نکات کی مکمل حمایت کرتی ہے انہوں نے کہاکہ ٹریفک کا برا حال ہے، سڑکیں تباہ حال ہیں، بجلی گیس اور پانی کی قلت ہے جبکہ پاک سرزمین پارٹی کے ملین مارچ عوام کے حقوق کیلئے ہے عوام بڑی تعداد میں شرکت کریں
پی ایس پی کے سینئر وائس چیئر مین ڈاکٹر صغیر احمد، وائس چیئر مین وسیم آفتاب نے نیو ٹاؤن کی مختلف مارکیٹوں دورہ کیا 
عوام کو 14 مئی کے حوالے کے حوالے عوام میں پمفلٹ تقسیم کئے گئے کراچی ()پاک سرزمین پارٹی کے تحت14 مئی کے ملین مارچ کے حوالے پی ایس پی کے سینئر وائس چیئر مین ڈاکٹر صغیر احمد، وائس چیئر مین وسیم آفتاب نے نیو ٹاؤن کی مختلف مارکیٹوں دورہ کیا اور وہاں پرعوام کو 14 مئی کے حوالے کے حوالے عوام میں پمفلٹ تقسیم کئے گئے ۔ اس مو قع پر سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کے اراکین نے موجود تھے۔عوام کی جانب سے پی ایس پی رہنماؤں کو اپنے ہمراہ دیکھ کر خوشگوار حیرت کا اظہار ۔اس مو قع پر ڈاکٹر صغیر احمد اور وسیم آفتاب نے کہاکہ عوام کے مسائل حل کرنے نکلے ہیں، 16 نکات میں کسی قسم کی کوئی سیاسی پوائنٹ اسکورنگ نہیں اورحالات بہتر نہ کئے تو آئندہ آنے والی نسلیں ہمیں معاف نہیں کریں گی اورملک بھر میں عوام بیدار ہو چکی ہے، حکمرانوں کو عوام کے حقوق دینے ہونگے. اس مو قع پر عوام نے سید مصطفی کمال کی کراچی کو دوبارہ روشنیوں کا شہر بنانے کی کاوشوں کو سراہا اور ملین مارچ میں بھرپور شرکت کی یقین دہانی 

 

کراچی ،09 مئی2017

پانی مہاجروں کیلئے نہیں تمام قومیتوں کیلئے مانگے،ہتھیار نہیں ہیں کہ اپنی بات کو جبراً منواؤں، مصطفی کمال

کراچی کے عوام 14 مئی کو نکلیں، ہم حکومت گرانے نہیں حق مانگنے کیلے نکل رہے ہیں، سید مصطفی کمال
مصطفی کمال سے امیدیں وابستہ ہیں پاکستان کی بقا کیلئے مل کر جدوجہد کریں گے، ثروت اعجاز قادری
پی ایس پی کے ملین مارچ کی مکمل حمایت کرتے ہیں، بھرپور شرکت کریں گے، ثروت اعجاز قادری 

کراچی ()پاک سرزمین پارٹی چیئرمین سید مصطفی کمال نے کہا ہے کہ پانی صرف مہاجروں کیلئے نہیں تمام قومیتوں کیلئے مانگ رہاہوں میرے پاس ہتھیار نہیں جو اپنی بات کو جبراً منوالوں،کسی مسلک، زبان و نسل کے انسان کے پاس جانے میں مصطفی کمال کو ہچکچاہٹ نہیں ہے ان لوگوں کو شرم کرنی چاہیے جو اپنی قوم کے لوگوں کو دوسری قومیتوں سے لڑاتے ہیں،اسکولوں میں معیاری تعلیم، اسپتالوں میں ادویات اور ڈگری تھامے نوجوانوں کیلے نوکریاں مانگنے جا رہے ہیں،کراچی کے عوام 14 مئی کو نکلیں اور آنے مستقبل کا فیصلہ کریں، ہم حکومت گرانے نہیں حق مانگنے کیلے نکل رہے ہیں ان خیالات اظہار انہوں نے سنی تحریک کے سربراہ ثروت اعجاز قادری، شاہد غوری اور دیگر رہنماؤں سے انکے مرکزی دفتر میں ملاقات اور میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کر تے ہوئے کیا۔ اس پر مو قع پر پی ایس پی سیکریٹری جنرل رضا ہارون،وائس چیئر مین وسیم آفتاب اور محمد دلاور بھی موجود تھے، انہوں نے کہا کہ مصطفی کمال کو اس جگہ جانے میں کوئی شرم یا عار محسوسات نہیں ہوگی جہاں عوام کی بقا و خوشحالی کی بات ہو کیونکہ کوششوں کرنا انسان کے بس میں ہے، حکمران اگر میرے بچوں کو پانی نہیں دے سکتے تو حکمرانی نہیں کرنے دیں گے،میئر کراچی کے ملین مارچ میں شامل ہونے سے کوئی فرق نہیں پڑے گااچھا ہوگا مئیر کراچی ملین مارچ میں نہ آئیں کیونکہ شام کے بعد انکی سرگرمیاں مشکوک ہوجاتی ہیں انہوں نے کہاکہ مہاجر ہونے کی حیثیت سے کہتا ہوں کہ اگر مہاجر مہاجرین کا نعرہ لگا سیاست کرنے لگا تو مجھ سے بڑا ان کا دشمن کوئی نہیں ہوگا مہاجروں کے نعرے پر لوگ تو آسانی سے جمع کر لوں گا لیکن دیگر قومیتوں کو کیسے اکیلا چھوڑا جاسکتا ہے، سنی تحریک، ایم کیو ایم، تحریک انصاف اور دیگر جماعتوں کے کارکنان کا بھی یہی مسئلہ ہے جس کیلئے ہم ملین مارچ کر رہے ہیں اپنی آخری سانسوں تک اپنے لوگوں کی بقا کیلئے جدوجہد کرتا رہوں گاانہوں نے کہاکہ اختلافات گھروں میں بھی ہوتے ہیں لیکن ان کی وجہ سے کسی فرد کا قتل نہیں کیا جاتا اوراس شہر میں لوگوں کی ایک پیاروں کی لاشیں دیکھی ہیں، سابقہ ادوار میں بھی ہمیشہ صحیح کو صحیح اور غلط کو غلط کہتے تھے، اس شہر کا انفراسٹرکچر تباہ ہو گیا ہے لیکن حکومت کے کان پر جوں تک نہیں رینگی،آج اس شہر میں جو تباہی ہو رہی ہے اس تو ٹھیک کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں کیونکہ اس شہر کو اس وقت دنیا کا خوبصورت شہروں کی فہرست میں لاکھڑا کیا تھا جب کام کرنا نہیں آتا تھا آج اپنے شہر کا حال دیکھ کر دکھ ہوتا ہے، انہوں نے ثروت اعجاز قادری اور پاکستان سنی تحریک کے رہنماؤں کی مہمانوں نوازی پر شکر ادا کیا اس مو قع پر سر براہ سنی تحریک ثروت اعجاز قادری نے کہاکہ پاک سرزمین پارٹی کے 16 نکات اس شہر اور پاکستان کے وسیع تر مفاد میں ہیں انسانیت کی خدمت کیلئے ہم سب کو مل کر کام کرنا ہوگاسید مصطفی کمال سے ہمیں امیدیں وابستہ ہیں پاکستان کی بقا کیلئے مل کر جدوجہد کریں گے اور مصطفی کمال نے جس طرح نظامت کے دور میں اس شہر کی خدمت کی آیندہ بھی کریں گے انہوں نے پی ایس پی کے ملین مارچ کی مکمل حمایت کرتے ہوئے اپنی اور پارٹی کی جانب سے بھرپور شرکت یقین دہانی کروائی

کراچی ،09 مئی2017

صدر پی ایس پی انیس قائم خانی کا دیگر رہنماؤں کے ہمراہ گلستان جوہر ،میلنئم شاپنگ مال سمیت دیگر مارکیٹوں کا دورہ
مصطفی کمال کے پیغام پر مبنی خط لوگوں میں تقسیم، 14مئی ملین مارچ میں شرکت کی دعوت
عوام ملین مارچ کے ذریعے اپنے حقوق لیں گے کیونکہ کراچی اور سندھ کی عوام جاگ چکی ہے، صدر پی ایس پی انیس قائم خانی

کراچی ( )پاک سرزمین پارٹی کے زیرِ اہتمام 14 مئی ملین مارچ کی کال کے سلسلے میں عوامی رابطہ مہم زور شورکے ساتھ جاری ہے، اس سلسلے میں پاک سرزمین پارٹی کے صدر انیس قائم خانی، سیکریٹری جنرل رضاہارون نے دیگر رہنماؤں کے ہمراہ کراچی علاقے گلستان جوہر میں میلینیم مال اور دیگر مارکیٹوں کا دورہ کیا اور سید مصطفی کمال کا پیغام پر مبنی خط عوام میں تقسیم کیا اور انہیں 14مئی کو ہونے والی ملین مارچ میں شرکت کی دعوت دی، اس مو قع پر عوام کا جوش خروش قابل دید تھا، اس مو قع پر پی ایس پی کے صدر انیس قائم خانی نے عوام سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ 14مئی کو عوام ملین مارچ کے ذریعے اپنے حقوق حکمرانوں سے چھینیں گے، کراچی اور سندھ کی عوام جاگ چکی ہے حکمرانوں کو اپنے قبلہ درست کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہاکہ 14مئی کا عوام سیاسی،مذہبی، لسانی تفریق کو ختم کرکے اپنی انے والے نسلوں کیلئے شاہراہ فیصل جمع ہو کر ایک نئی تاریخ رقم کریں گے اور قبل از وقت حقوقِ حاصلِ کر کے واپسی کی راہ اپنائیں گے

 

کراچی ،08 مئی2017

لسانیت کی آگ لگا کر سیاست نہیں کرنا چاہتے ہم نے لسانی تفریق اور سیاست ختم کر دی ہے، مصطفی کمال
مہاجروں کا سب سے بڑا دشمن مہاجر نام پر سیاست کرنے والا ہے
کراچی میں رہنے والی ساری اکائیوں کو ہم نے جوڑ دیا ہے
. اگر صرف 6 ماہ ایمانداری سے کام کیا جائے تو شہر واپس روشنیوں کا شہر بن جائے گا

چیئرمین پاک سر زمین پارٹی سید مصطفی کمال نے کہاکہ مہاجروں کا نعرہ لگانے سے پہلے ہی مہاجروں کے کئی دشمن تیار ہو جائیں گے، مہاجروں کا سب سے بڑا دشمن مہاجر نام پر سیاست کرنے والا ہے ، لسانیت کی آگ لگا کر سیاست نہیں کرنا چاہتے ہم نے لسانی تفریق اور سیاست ختم کر دی ہے اورآئندہ آنے والی نسلوں کو مل کر بیٹھنا ہے تو پھر آج ہم اپنی آخرت کیوں خراب کریں،کراچی میں رہنے والی ساری اکائیوں کو ہم نے جوڑ دیا ہے ،ملک بھر میں اب صرف مسائل پر سیاست ہو گی. اگر صرف 6 ماہ ایمانداری سے کام کیا جائے تو شہر واپس روشنیوں کا شہر بن جائے گا ان خیالات اظہار انہوں نے 14مئی کے سلسلے میں جاری عوامی رابطہ مہم کے مو قع پرپاک سرزمین پارٹی کے زیر اہتمام بلدیہ ٹاؤن میں منعقدہ عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔انہون نے کہاکہ 70 فیصد زرمبادلہ کمانے والا شہر کچرے کا ڈھیر بنا ہوا ہے آج ہمارے مزدور حکمرانوں کی وجہ سے خود کو اور اپنے بچوں کو زہر دہنے پر مجبور ہیں حکمرانوں کے مظالم میں وہ لوگ بھی شریک جرم ہیں جو مظالم پر خاموش ہیں انہون نے کہاکہ ہمارا کام سہی اور غلط بتانا ہے زبردستی اس پر عمل کروانا نہیں جب ہم اپنے ذاتی مفاد کے لئے بلائیں تو عوام کو حق ہے کہ وہ نہ آئیں لیکن یہ ملین مارچ آنے والی نسلوں کی بقاء کے لیے ہے اس لئے عوام کا نکلنا فرض ہے عوام صرف ہمت کریں اللہ رحمت کے دروازے کھول دے گاانہون نے کہاکہپاک سرزمین پارٹی کے قیام کا مقصد سیاست نہیں عوام کی خدمت ہے ، سیاسی حریفوں نے خود کہا تھا کہ کسی کو پہلے ایسے علاقے میں خدمت کرتے نہیں دیکھا جہاں اس کی جماعت کے نمائندے نہ ہوں انہون نے کہاکہ نظامت کے دور میں بلدیہ کے لئے 60 ملین گیلن پانی کی لائن ڈالی عوام کے منتخب نمائندے کہاں ہیں جنہوں نے ووٹ مانگنے کے لیے عوام سے بڑے بڑے دعوے کئے تھے انہون نے کہاکہ میں اور میری پارٹی کے رہنما تمام تر آسائشوں اور طاقت کو ٹھکرا کر آئے تھے جن بند کمروں میں ہم بیٹھتے تھے وہاں عوام کی فلاح کی بات نہیں ہوتی تھی جب سارے پردے آنکھوں پر سے ہٹ گئے تو عوام کی خاطر خود کو برائی سے علیحدہ کر لیا انہون نے کہاکہ وزیراعظم بھی بن گیا تب بھی وقت متعین پر مرنا ہے صرف آخرت کی فکر ہے اورہمیں تمام دنیاوی آسائشیں اور مراعات حاصل تھیں یہی مطلوب ہوتیں تو اب کچھ چھوڑ کر نہیں جاتے انہون نے کہاکہ عوام کی خاطر 18 راتوں تک پریس کلب کے باہر سڑک پر بیٹھے رہے اور16 مطالبات عوام کے حقوق کے حصول کے لیے ناگزیر ہیں یہ آئندہ آنے والی نسلوں کے مستقبل کا سوال ہے انہون نے کہاکہ ایک نسل مرگئی، ایک جیلوں میں ہے اور ایک مرنے کے لیے تیار کھڑی تھی، اس لیے ہتھیاروں کی سیاست نہیں کریں گے انہون نے کہاکہ میں اور میرے کارکنان سی ایم ہاؤس جا سکتے تھے لیکن سیاست رہ جاتی مسائل دب جاتے ،میں لندن سے بیٹھ کر آواز نہیں لگا رہا بلکہ ملین مارچ میں سب اے آگے ہونگا

پاک سرزمین پارٹی کے زیر اہتمام گلستان جوہر میں منعقدہ عوامی اجتماع سے خطاب کر تے ہوئیچیئرمین پاک سرزمین پارٹی سید مصطفی کمال نے کہاکہ حکمرانوں کے پاس اب آپشن نہیں ہے انہیں ہمیں صاف پانی، بجلی روزگار اور بنیادی انفراسٹرکچر دینا پڑے گا14 مئی کے دن 1 ملین لوگ پی ایس پی نہیں بلکہ اپنے حقوق اور آنے والی نسلوں کے لئے نکلیں، کیا گلستان جوہر کے عوام کے پاس کوئی اور آپشن موجود ہے؟ مہاجروں کے نام پر سیاست کرنے والے ہم مہاجروں کے سب سے بڑے دشمن ہیں ،سستی شہرت مہاجر کو نعرہ لگا کر حاصل ہوسکتی یے، لیکن اس شہر کے پختون،بلوچ اور سندھی کس کے پاس جائیں گے؟ کیا ہم قومیتوں کی بنیاد پر قلعے بنا کر رہیں؟ لاڑکانہ چل کے دیکھو سندھیوں کا پیپلز پارٹی نے کیا حشر کر رکھ ہے، انسانی اور جانور ایک جگہ سے پانی پیتے ہیں، سندھیوں کا حال بھی مہاجروں کی طرح ہے، ووٹ دینے کیلے نہیں آناخداراہماری ایک کوشش آپ عوامی کیلئے اس کارخیر میں ہمارا ساتھ دیں اور اپنا حصہ ملائیں ،10 لاکھ لوگ سڑکوں پر نکلیں، قبل ازوقت ہم اپنے وسائل لے کر گھر واپس آئیں گے آپ کے میرے اور سب کے گھر میں پانی آئے گا ہمارے گھر بجلی گیس، سڑکیں اور دیگر سہولیات حاصل ہوں گی ان خیالات اظہار انہوں نے گزشتہ روز 14مئی کے سلسلے میں جاری عوامی رابطہ مہم کے مو قع پرپاک سرزمین پارٹی کے زیر اہتمام گلستان جوہر میں منعقدہ عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہاکہ ووٹ مانگنے مراعات حاصل کرنے کی مہم چلانے نہیں جارہے، اپنے لوگوں کے بنیادی وسائل حاصل کرنے نکلے ہیں اور16 نکات عوام الناس کہ فلاح و بہبود اور بنیادی حقوقِ کے حصوں کیلے حکومت کے ایوانوں تک پہنچائے۔

کراچی ،08 مئی2017

ایجوکیشن ایکسپو کے انعقاد سے پاکستان کو فائدہ حاصل ہوگا ہم اس شہر کو تعمیر کرنا چاہتے ہیں، مصطفی کمال
بھارت نے پاکستان کے اسکولوں میں آکر نقل نہیں کروائی،ہم خود اپنے مستقبل کے معماروں کے دشمن بنے ہوئے ہیں
فاروق ستار سے الحاق کی باتوں میں صداقت نہیں،

کراچی ( )پاک سرزمین پارٹی کے چیئرمین سید مصطفی کمال نے کہا ہے کہ پاکستان کو اس ایجوکیشن ایکسپو سے فائدہ حاصل ہوگا ہم اس شہر کو تعمیر کرنا چاہتے ہیں،ڈھائی کڑور بچے پاکستان میں تعلیم سے محروم ہیں جن بچوں کو صحت، اور بنیادی سہولیات نہیں تو وہ تعلیم کیسے حاصل کریں گے،بھارت نے پاکستان کے اسکولوں میں آکر نقل نہیں کروائی ہم خود اپنے مستقبل کے معماروں کے دشمن بنے ہوئے ہیں،کراچی شہر اس ملک کی معیشت کو ستر فیصد ریونیو کما کر دیتا ہے، ان خیالات کا اظہار انہوں نے دی نیوز جنگ گروپ کی جانب سے ایکسپو سینٹر میں لگائی گئی تعلیمی نمائش کے اختتامی تقریب میں میڈیا کے نمائندوں اور مختلف جامعات کے اساتذہ اور طالب علموں سے گفتگوکرتے ہوئے کیا.اس مو قع صدر انیس قائم خانی، سیکریٹری جنرل رضاہارون وسیم آفتاب اور دیگر رہنما موجودتھے، سید مصطفی کمال نے کہا کہ پاکستان میں دہشت گرد مل جائیں گے لیکن انجینئر، ڈاکٹرز اور پروفیشنلز مشکل سے ملیں گے ہماری حکومتیں اپنی قوم کو تباہ کرنے کے لیے کافی ہیں ایک وزیر اعلی اور چند منسٹر پوری حکومت چلا رہے ہیں یہ ہارے صوبے کیلے لمحہ فکریہ ہے قوم تباہ ہو رہی ہے انہوں نے کہا کہ حکومت کا کام ہے کہ سندھ میں نقل کو روکا جائے حکومت مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے ہم مہاجر نام پر سیاست نہیں کر رہے، مہاجروں کا نام لے کر لوگوں کو بہت بیوقوف بنایا گیا ہے اس شہر میں لسانیت پر لوگوں کو بھینٹ نہیں چڑھنے دیں گے انہوں نے کہا کہ فاروق ستار سے الحاق کی باتوں میں صداقت نہیں انہوں نے کہا کہ 900 ارب روپے کھا گئے، تعلیم صحت کے 9 ماڈل اسکول اور اسپتال نہیں بنا سکے، انہوں نے جنگ گروپ کو تعلیمی میدان میں اس طرح کے اقدامات کرنے پر مبارکباد پیش کرتے ہیں،بعدازاں مصطفی کمال کا ایکسپو سینٹر میں مختلف یونیورسٹیوں کی جانب سے لگائے گئے اسٹالز کا دورہ کیا اور تعلیمی شعبوں سے تعلق رکھنے والے پروفیشنلز اور طلبا و طالبات سے گفتگو بھی کی.

 

کراچی ،05 مئی2017

ممتاز و جید شیعہ عالم شہنشاہ حسین نقوی کا پی ایس پی کے ملین مارچ کی حمایت کا اعلان 

انسانی مسائل پر مرکوز ہے  سیاست نہیں کر رہے اور نہ کسی کی حکومت گرانے کی سازش کررہے ہیں، سید مصطفی کمال 

حکمرانوں نے عوام کی خدمت کرنے کا حلف لے رکھا ہے، چیئرمین پی ایس پی 

 
کراچی (          ) چئیرمین پاک سرزمین پارٹی سید مصطفی کمال نے کہا ہے کہ ہماری توجہ انسانی مسائل پر مرکوز ہے  سیاست نہیں کر رہے اور نہ کسی کی حکومت گرانے کی سازش کررہے ہیں کوئی اگر سمجھتا ہے کہ ہم سیاست کررہے ہیں تو یہ ان کی خام خیالی ہے، ان خیالات کا اظہار سید مصطفی کمال نے ممتاز و جید شیعہ عالم دین شہنشاہ حسین نقوی سے امام بارگاہ باب العلم میں ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا، اس موقع پر پارٹی صدر انیس قائم خانی، وائس چیئرمین وسیم آفتاب، محمد دلاور اور دیگر موجود تھے، سید مصطفی کمال نے اس موقع پر مزید کہا کہ پاک سرزمین پارٹی کا منشور عوامی خدمت ہے کسی کے خلاف کوئی سازش نہیں کر رہے حکمرانوں نے عوام کی خدمت کرنے کا حلف لے رکھا ہے لیکن عوام کے بنیادی مسائل پر کوئی توجہ ہی نہیں ہے، بعد ازاں سید مصطفی کمال نے  شہنشاہ حسین نقوی کو پاک سرزمین پارٹی کے عوامی مسائل کے حل کیلئےعوام کے حقوق کیلئے کی جانب والی جدوجہد  اور  پی ایس پی کے 16 نکات اور 14 مئی کو کیے جانے والے ملین مارچ کی تائید و حمایت پر ان کا شکریہ ادا کیا

 

کراچی ،04 مئی2017

امن و سلامتی اور تشدد کے بغیر 10 لاکھ چل پڑے تو کامیابی وقت سے پہلے قدموں میں ہوگی، مصطفی کمال
لوگوں کو اپنی حقوق حاصل کرنے کیلے تکلیف برداشت کرنا پڑے گی، مصطفی کمال
ووٹ دینے کیلئے مت آنا لیکن 14 مئی کو اپنے اور اپنے بچوں کیلئے خدارا نکلو
ظلم کے خلاف آواز لگائے بغیر مر گیے تو جواب اللہ کی عدالت میں دینا ہوگا
حق و سچ کو اجاگر کرنے اور جھوٹ کا پردا فاش کرنے پر صحافیوں کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں

کراچی ()چیئرمین پاک سرزمین پارٹی سید مصطفی کمال نے کہ ہے کہ امن و سلامتی اور تشدد کے بغیر 10 لاکھ چل پڑے تو کامیابی وقت سے پہلے قدموں میں ہوگی،لیاری، عثمان آباد کی عوام ہی سارے کراچی کے مسائل کو حل کروانے کیلے کافی ہے، حق و سچ کو اجاگر کرنے اور جھوٹ کا پردا فاش کرنے پر صحافیوں کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں اورحکمرانوں قبرستانوں میں مدفن بادشاہوں سے عبرت حاصل کرو، عوام کو صاف پانی، بجلی گیس ادویات اور روزگار دے دو. عوام کو ٹریفک جام میں پھنسا کر بد دعائیں ملیں ایسا مصطفی کمال کو قبول نہیں،مسائل سے چھٹکارا حاصل کرنے کیلے سوئی کی چبھن برداشت کرنا پڑے گی اورحکمران آسانی سے صاف پانی، بجلی، ادویات اور روزگار آسانی نے نہیں دیں گے، ٹریفک جام ہوگا، لوگوں کو اپنی حقوق حاصل کرنے کیلے تکلیف برداشت کرنا پڑے گی ووٹ دینے کیلئے مت آنا لیکن 14 مئی کو اپنے اور اپنے بچوں کیلئے خدارا نکلو، دن و رات احتجاج کرے بتا دیا کہ ہم جھکنے اور بکنے والے نہیں ہیں،ریڈ زون میں داخل ہو سکتے تھے، میڈیا پر بریکنگ نیوز ہوتی لیکن عوام کے مسائل دب کر رہ جاتے ان خیالات اظہار انہوں نے پی ایس پی کے تحت14مئی کے حوالے سے عوامی رابطہ مہم کے سلسلے میں پاک سرزمین پارٹی کے تحت گارڈن ڈسٹرکٹ ساؤتھ کے علاقے میں منعقدہ عوامی اجتماع میں عوام کے پر ہجوم اجتماع سے خطاب کر تے ہوئے کیااس مو قع پرصدر انیس قائم خانی، سینئر وائس چیئرمین انیس آیڈووکیٹ، ڈاکٹر صغیر، وسیم آفتاب اور دیگر رہنما ان کے ہمراہ موجودتھے انہوں نے کہاکہ عوام کو راضی کرنے اور تالیاں بجوانے کیلئے یہ جدوجہد شروع نہیں کی ایک نسل جیلوں میں اور 2 نسلیں کٹ مر گئیں مزید سلسلہ اب بھی جاری ہے اورمصطفی کمال مرنے سے پہلے آواز لگانے کیلئے آیا ہے اورظلم کے خلاف آواز لگائے بغیر مر گیے تو جواب اللہ کی عدالت میں دینا ہوگا انہوں نے کہاکہ آج کاا اجتماعی سیاسی جلسہ نہیں ہے اور نہ ووٹ مانگنے کیلے آئے ہیں اوررمضان میں فطرہ اور 2 ماہ بعد عید الضحٰی میں کھالیں جمع کرنے کیلے میں آپ سے مخاطب نہیں ہوا ہوں یہان پرکچھی، بوہری اور دیگر کمیونٹی کے لوگوں یہاں موجود ہیں انہوں نے کہاکہ مراعات اور دیگر مفادات حاصل کرنے کیلئے لوگ سیاسی جماعتیں بنتے ہیں اورپاک سرزمین پارٹی کی قیادت سابقہ جماعت میں منسٹر سینیٹر اور رکن قومی و صوبائی اسمبلی تھے جن بند کمروں میں اورہم 50 کروڑ روپے خرچ کے لوگ سینیٹر بنتے تھے،یونین کونسل کا ناظم عہدے سے ہٹانے بعد کاروبار کرتا ہے، انہوں نے کہاکہ مصطفی کمال اور انیس قائم خانی پر الزام لگانے والا کوئی نہیں ہے اور نہ تھا،مصطفی کمال سمیت ہم سب نے سب سے مشکل فیصلہ کیا اور ایم کیو ایم کو خیر باد کہہ دیا انہوں نے کہاکہ300 ارب روپے اپنے ہاتھ سے خرچ کرنے کے بعد جب نظامت چھوڑی تو اپنے بچوں کیلے نوکری کی انہوں نے کہاکہ عوام کے ووٹ دینے سے ہمیں پروٹوکول ملے گا تو کیا پہلے یہ سب ہماری پاس نہیں تھا،عوام سوتی تھی مصطفی کمال راتوں کو سڑکیں، پانی کی لائینیں، سیوریج کا نظام ٹھیک کروانے کیلئے موجود ہوتا تھا۔انہوں نے کہاکہ قدرت کا کرشمہ ہے ایک سال پہلے دو افراد 3 مارچ کے دن نہتے آئے اور حق و سچ کی بات کہی آج ہمارا مسئلہ لوگوں کے آنے کا نہیں بلکہ عوام کا سمندر ہے جو پاک سرزمین میں شامل ہو چکا ہے انہوں نے کہاکہ ہر جماعت کا رہنما عوام سے جھوٹے وعدے کر کے چلا جاتا ہے لیکن مصطفی کمال ان روایتی سیاست دان نہیں اورمیں مہاجر ہوں، لیکن جو لوگ آج مہاجروں کو اکسا رہے ہیں وہ سب سے بڑے مہاجروں کے دشمن ہیں انہوں نے کہاکہ کراچی میں لاکھوں سندھی، بلوچی پٹھان اور پنجابی ہیں وہ کس کی جانب دیکھیں گے اورایک انسان بھی میری بات نہ مانے اور چلا جائے، لیکن مصطفی کمال مہاجروں کی نسلوں کی بقا کیلئے اپنی بات سے نہیں ہٹے گا انہوں نے کہاکہ مہاجر لیاری، چکرا گوٹھ اور کٹی پہاڑی سے گزر نہیں سکتے تھے اگر آج گلے نہیں ملے دل صاف نہیں کیے تو آنے والے نسلوں کو کس طرح دشمنیوں سے بچاؤ گے۔ انہوں نے کہاکہ ساجد بلوچ لیاری سے پاک سرزمین پارٹی کی حصہ ہے، مہاجروں کے ساتھ بیٹھتا ہے،مصطفی کمال لیاری، کٹی پہاڑی، سہراب گوٹھ چکرا گوٹھ جاتا ہے تو ہزاروں لوگ استقبال کرتے ہیں انہوں نے کہاکہ کامیابی کی پہلی سیڑھی یہ ہے آج ملک میں پانامہ اور ڈان لیکس کے باوجود سیاسی جماعتیں کراچی کے مسئلے پر بات کررہی ہیں،پاک سرزمین پارٹی کے رہنماؤں کے ٹاک شوز اور بیانات کی وجہ سے سیاسی جماعتیں مجبور ہوگی ہیں کل وہ کراچی کء کے مسئلے بات کریں انہوں نے کہاکہ آج جو لوگ اختیارات کے نہ ہونے کا رونہ روتے ہیں ہم ان کیلے بھی اختیارات مانگ رہے ہیں،18 راتیں، گرمی کی شدت اور بغیر ائیر کنڈیشن کنٹینر کے فٹ پاتھ پر لیاری اور عثمان آباد کے لوگوں کیلئے گزارے انہوں نے کہاکہ عوام کو سہانے خواب دکھا کر ووٹ لینے والوں نے الیکشن سے قبل عوام کو اختیارات کے نہ ہونے کا کیوں نہیں بتایا آج یہ دھرنا دینے اور ملین مارچ کرنے کہ ضرورت پیش نہیں آتی اورسکھر میرپور خاص کے میئر کراچی کے میئر سمیت یوسی چیرمین و کونسلر پاک سرزمین پارٹی کے ہوں تو حکومت سے اختیارات نہ دینے ہر استعفے دے دیں گے،اگر ایسا ہوجائے تو کراچی سے خیبر تک بھونچال آجائے گا اور حکومت اختیارات دینے کیلئے مجبور ہوگی انہوں نے کہاکہ وزیراعظم بننے کے بعد مصطفی کمال کی زندگی بڑھ نہیں جائے گادنیا بھر کے قبرستان بادشاہوں اور فرعونوں سے بھرے پڑے ہیں انہون نے کہاکہ نادان دوست کہتے ہیں کہ مصطفی کمال کو لوگوں کی خدمت کرنا الطاف حسین نے سکھایا،30 سالوں میں سینکڑوں میئر، منسٹر رہے 14 سال گورنر رہا، مصطفی کے علاوہ کوئی دوسرا بندہ پیدا نہیں کر سکے،13 سال بعد گورنر کو پارٹی سے اپنی بہن کے گھر رینجرز چھاپہ پر بیان نہ دینے پر نکالا اس شہر میں ہزاروں نوجوانوں قتل، والدین بچوں سے محروم، سہاگن بیوہ ہوگئیں اس پر ہر کسی کو پارٹی سے نہیں نکالاانہون نے کہاکہ آج آزاد صحافت کا دن ہے لیکن آمرانہ آرڈر سے بول چینل کو بند کردیا ہے صحافتی ذمہداری کے دوران شہید صحافیوں کے بلند درجات کی کیے دعا کرتے ہیں

 

کراچی ،04 مئی2017

مصطفی کمال کی آواز پر 14 مئی کے دن جناح کی شہر کے حقوق کیلئے باہر نکلیں، رضا ہارون
ایم کیو ایم کے سابقہ رکن اسمبلی عزیز بانٹوا کا پاک سرزمین پارٹی میں شمولیت کا اعلان

کراچی () پاک سرزمین پارٹی سیکریٹری جنرل رضاہارون نے کہاکہ کراچی بھیک نہیں مانگے گا، پاکستان کی معاشی شہ رگ کے عوام کو اپنے حقوق چھیننا آتا ہیں مصطفی کمال کی آواز پر 14 مئی کے دن جناح کی شہر کے حقوق کیلئے باہر نکلیں انہوں نے کہاکہ عوام کے غصب کیے ہوئے حقوق کو حاصل کرنے کی جدوجہد کا مصطفی کمال اور انیس قائم خانی نے آغاز کیا اس شہر کے عوام خواہ وہ کسی بھی جماعت و رنگ و نسل سے تعلق رکھتے ہوں سب کیلے احتجاج کیااورجمہوری حکومت کے نام پر آمرانہ حکومت کو ایکسپوز کیا انہوں نے کہاکہ پی ایس پی نے سیاسی لیڈران کو کراچی آنے اور یہاں کے عوام کے حقوق کی بات کرنے کیلئے مجبور کیااورغیروں کے ظلم و ذیادتی ایک جانب لیکن دھوکہ ہمارے اپنوں نے دیا انہوں نے کہاکہ30 سال تک ایک شخص اور جماعت کو اپنا نجات دہندہ سمجھ کو الیکشن میں منتخب کروایا ،چندہ، زکوۃ، فطرہ اور کھالیں دیں کر مالی امداد اور نوجوانوں کی جانیں تک قربان کی گئیں اورکوٹہ سسٹم ختم کروانے اور حقوق دلوانے کے دعوں پر ایم کیو ایم قائم ہوئی تھی انہوں نے کہاکہ30 سال پہلے لوگوں کے گھروں میں پینے کا پانی نلکے سے استعمال کیا جاتا تھا ،شہر سے کچرا اٹھایا جاتا، سیوریج کا نظام بہتر تھا، لیکن آج کچھ بھی ٹھیک نہیں انہوں نے کہاکہ جو نعرے ایم کیو ایم کی بنیاد تھے ان. میں سے ایک نعرہ آج تک پورا نہیں ہوا کراچی شہر قائد اعظم کی جائے پیدائش اور آخری آرام گاہ ہے جسے جان بوجھ کر بگاڑ دیا گیا اور اس میں پیپلزپارٹی بھی ایم کیو ایم کے ساتھ اس شہر کی تباہی میں ملوث ہے ،تمام وزارتیں پیپلزپارٹی کے پاس تھیں اور آج بھی ہیں لیکن ترقیاتی کام اس شہر تو کیا پورے صوبے میں نہیں ہوا انہوں نے کہاکہ بھٹو کے نام پر ووٹ ملا لیکن اپنے قائد کے شہر لاڑکانہ تک کو ماڈل شہر نہی بنایا پاکستان کے محسن قائد اعظم کے شہر کو تباہ سڑکوں اور کچرے اور گندگی کے ڈھیر میں تبدیل کردیا گیا

بعدازاں کراچی :ایم کیو ایم کے سابقہ رکن اسمبلی عزیز بانٹوا کا پاک سرزمین پارٹی میں شمولیت کا اعلان یہ انہوں نے پاک سرزمین پارٹی کے تحت گارڈن ڈسٹرکٹ ساؤتھ کے علاقے میں منعقدہ عوامی اجتماع موقع پر کیا۔انہوں نے کہاکہ مصطفی کمال اور انیس قائم خانی نے جس جدوجہد کا آغاز کیا ہے اس جدوجہد میں ان کے ساتھ کھڑاہوں۔

 

کراچی ،04 مئی2017

عالمی یوم صحافت کے مو قع پر پاک سرزمین پارٹی کے سیکریٹری جنرل رضا ہارون کا وائس چیرمین وسیم آفتاب دیگر ذمہ داران کے ہمراہ کراچی پریس کلب کا دورہ

کراچی ( )عالمی یوم صحافت کے موقع پر پاک سرزمین پارٹی کے سیکریٹری جنرل رضا ہارون کا وائس چیرمین وسیم آفتاب رکن نیشنل کونسل مبشر امام اور مرکزی میڈیا سیل کے ممبران کے ہمراہ کراچی پریس کلب کا دورہ، پی ایس پی رہنماؤں نے صدر کراچی پریس کلب سراج احمد، جنرل سیکرٹری مقصود یوسفی اور دیگر صحافی حضرات سے ملاقات کی اور عالمی یوم صحافت پر تمام صحافیوں سے اظہار یکجہتی کیا اور پاکستان بھر صحافتی ذمہ داریوں کی انجام دہی کے دوران شہید صحافیوں کو خراج عقیدت بھی پیش کیا، اس موقع پر رضاہارون نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ میڈیا کی آزادی اور خودمختاری امن اور انصاف کے حصول اور معلومات کی فراہمی کیلئے انتہائی ضروری ہے، بدقسمتی سے پاکستان میں میڈیا کو آزاد کہا جاتا ہے لیکن ایسا عملی طور پر نہیں نظر آتا کبھی آزادی صحافت پر حکومت کی جانب سے قدغن لگائی جاتی ہے اور کبھی دہشت گرد میڈیا کو نشانہ بناتے ہیں، انہوں نے کہا کہ پاکستان میں صحافیوں کو درپیش مسائل اور ہمارے حکمرانوں کے آمرانہ و غیر آئینی اقدامات کے باوجود صحافی برادری اپنے پیشے سے وفاداری نبھانے میں مصروف عمل ہیں.

پی ایس پی کے چیئرمین سید مصطفی کمال مورخہ4 مئی بروز جمعرات ممتاز و جید شیعہ عالم دین علامہ شہنشاہ حسین نقوی سے ملاقات کریں گے.

پاک سر زمین پارٹی کے چیئرمین سید مصطفی کمال اور صدر انیس قائم خانی مورخہ4 مئی بروز جمعرات ممتاز و جید شیعہ عالم دین علامہ شہنشاہ حسین نقوی سے ملاقات کریں گے. اس موقع پر سید مصطفی کمال انہیں پی ایس پی کی 14 مئی کو ہونے والے ملین مارچ کے اغراض و مقاصد سے آگاہ کریں گے اور شرکت کی دعوت دیں گے.

 

کراچی ،03 مئی2017

حکمران جان لیں حیدرآباد سمیت سندھ بھر کے عوام جاگ اٹھے ہیں، مصطفی کمال
عوام کو پانامہ اور ڈان پر تقریریں سنانے سے کوئی فائدہ نہیں ہے انہیں صرف اپنے بنیادی حقوق چاہیں، مصطفی کمال
30 سالوں میں پاکستانیوں نے سیاست میں لسانیات، قومیت اور فرقہ واریت دیکھی ہے، سید مصطفی کمال
حیدرآباد میں گھوم کی لوڈشیڈنگ ہوتی ہے لیکن یہاں کے منتخب نمائندوں نے عوام کو احتجاج کیلئے نہیں نکالا، مصطفی کمال

چیئرمین پاک سرزمین پارٹی سید مصطفی کمال نے کہا ہے کہ پاکستان میں پانامہ اور ڈان لیکس کے باوجود سیاسی جماعتوں کو پاک سر زمین پارٹی نے کراچی کے مسائل پر بات کرنے کیلئے مجبور کردیا ہے، عوام کو ان بڑے مسائل سے کوئی لینا دینا نہیں ہے انہیں اپنے گھر میں صاف پانی، سستی بجلی، گیس، بچوں کیلے تعلیم اور صحت کی معیاری سہولیات چاہیں، پاک سرزمین پارٹی کی ایک سالہ عوامی جدوجہد نے ملک کی تمام چھوٹی بڑی سیاسی جماعتوں کو عوام کے مسائل پر احتجاج کرنے کیلے مجبور کیا ہے،حکمرانوں کو معلوم ہو چلا ہے کراچی حیدرآباد سمیت سندھ کے عوام جاگ اٹھے ہیں، پچھلے 30 سالوں میں پاکستانیوں نے سیاست میں لسانیات، قومیت اور فرقہ واریت دیکھی ہے حیدرآباد میں انٹرنیشنل میچز ہوتے تھے یہاں سے دانشور اور پڑھے لکھے باشعور و با صلاحیت نوجوان نکلتے تھے، اب عوام کو پانامہ اور ڈان پر تقریریں سنانے سے کوئی فائدہ نہیں ہے انہیں صرف اپنے بنیادی حقوق چاہیں ان خیالات کا اظہار انہوں نے حیدرآباد اور اندرون سندھ کی تباہ حال صورتحال کے خلاف حیدرآباد پریس کلب کے باہر احتجاجی دھرنے میں عوام الناس سے خطاب کر تے ہوئے کیا انہوں نے کہاکہ 14 مئی کو شاہراہ فیصل پر ملین مارچ کا اعلان وزارت عظمی اور مراعات حاصل کرنے کیلئے نہیں بلکہ کراچی، حیدرآباد سمیت اندرون سندھ میں صاف پانی، بجلی، گیس، تعلیم اور صحت سمیت ٹرانسپورٹ و دیگر بنیادی مسائل کے حل کیلے احتجاج ہر مجبور ہوئے، انہوں نے کہاکہ9 انتخابات میں ایک جماعت کو ووٹ دیا اسمبلیوں میں پہنچایا اپنے بچے لوگوں نے قربان کر دیے لیکن آج عوام کے مسائل کو حل کرنے والوں نے مفادات کی خاطر سب کچھ گروی رکھ دیا ہے، ان سے پوچھا جائے کے کیا اختیارات 24 گھنٹے پہلے چھینے گئے ہیں؟ الیکشن میں ووٹ لیتے وقت عوام کو کیوں نہیں بتایا کہ اختیارات نہیں ہیں، انسانی اقدار آج کے دور میں پستی کو چھو رہے ہیں پاک سرزمین پارٹی آج کے دور میں کراچی حیدرآباد سمیت پاکستان بھر میں عوامی مسائل پر اپنی سیاست کو مرکوز کر رکھا ہے، انہوں نے کہاکہ ہمارے پاس کوئی ایئر کنڈیشن کنٹینر نہیں تھا جس میں دھرنے کے دوران آرام کر لیتے ہم 18 دن دوپہر میں سخت گرمی اور رات کا سکون عوام کیلے قربان کیا، 16 مطالبات تیار کر تے وقت عوام اور صرف عوام کے مسائل اور ان کے حل تجویز کیے اوربد ترین مخالف جماعت کے میئر کیلے بھی 8 مطالبات رکھے انہوں نے کہاکہ پیپلزپارٹی کی حکومت نے بلدیاتی اداروں ہر قبضہ کر رکھا ہے عوام صاف پانی، بجلی گیس کی بندش اور روزگار نہ ملنے کی وجہ سے پریشان ہے لیکن حکومت کو کوئی پرواہ نہیں، قائد تحریک کے پاسپورٹ، شناختی کارڈ اور بہن کے گھر ہر رینجرز کا چھاپہ پڑنے پر احتجاج ہوتا ہے لیکن حیدرآباد میں 18 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ ہوتی رہی لیکن یہاں کے منتخب نمائندوں نے عوام کو احتجاج کیلئے نہیں نکالا، اگر آواز لگاتے توکراچی سمیت حیدرآباد،میرپورخاص میں عوام سڑکوں پر ہوتے لیکن انہیں اپنے مفادات کے علاوہ کسی کی پرواہ ہی نہیں، اپنے ہاتھوں سے اختیارات پیپلزپارٹی کے حوالے کرنے والے اختیارات نہ ہونے پر واویلا کرتے ہیں، بعد ازاں سید مصطفی کمال نے حیدرآباد ڈسٹرکٹ کمیٹی اور یہاں کے تمام زمہ داران کا شکریہ جنہوں نے سخت موسم میں اس احتجاجی دھرنے کا انعقاد کیا.

کراچی ،03 مئی2017

کراچی میں رہنے والے تمام قومیتوں کے لوگ ایک ہوگےُ ہیں ، انیس قائم خانی ، پی ایس پی صدر
وفاقی اور صوبائی حکومتوں نے کراچی کی تعمیر وترقی پہ کوئی توجہ نہیں دی
کراچی کے لوگوں کے اتحاد سے ملک دشمن عناصر کو مایوسی کا سامنا ہے ، انیس قائم خانی
 ١٤مئی ملین مارچ مسائل کے حل کے لےُ لوگوں کو نکلنا ہوگا ،انیس قائم خانی

پاک سر زمین پارٹی کے صدر انیس قائم خانی نے اپنے بیان میں گلشن معمار میں شاندار عوامی رابطہ مہم پر کہا کہ مصطفی کمال کی محنت رنگ لے آئی ملک کی تمام قومیتوں کو ملانے کا انکا مشن کامیاب ہوگیا شہر کراچی کے تمام افراد چایے مہاجر ,پختون,سندھی,بلوچی,پنجابی سب ایک پاکستانی قوم میں تبدیل ہوگےُ ہیں گلشن معمار میں عوامی رابطہ مہم کے سلسلے میں کی جانے والی کارنر میٹنگ جلسہ میں تبدیل ہوگئی اور جلسہ میں پاکستان کی تمام قومیتوں کے افراد شمولیت اور ان افراد کی وطن سے محبت اور باہمی اتحاد ویکجہتی کی بدولت آج کراچی تکمیلِ پاکستان کی جانب گامزن ہے آج کراچی کے لوگوں کو لڑانے والوں کے لےُ مایوسی کا دن ہے کیونکہ آج مصطفیٰ کمال نے کراچی میں بسنے والے مہاجر پختون بلوچ پنجابی اور سندھی سمیت تمام قومیتوں کے افراد کو ایک کردیا ہے اور کوئی ملک دشمن اب بھائی کو بھائی سے نہیں لڑا سکتا انہوں نے کہا افسوس کے ملک کے حکمرانوں نے پوری توجہ حکمرانی کیلےُ لوگوں کو لڑاوُ اور حکومت کرو کی پالیسی پہ مرکوز کی ہوئی ہے کراچی جو پاکستان کا معاشی حب ہے اس کی تعمیر وترقی کا وفاقی وصوبائی حکومتوں نے قتعی خیال نہیں کیا اور ملک دشمن عناصر نے اسکا فائدہ اٹھایا مگر مصطفیٰ کمال بدولت آج تمام سیاسی جماعتیں کراچی کے مسائل کے لےُ آواز اٹھارہی ہیں جسکو ہم قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں 14 مئی کو ملین مارچ میں کراچی کے لوگوں کو اپنے مسائل کے حل کے لےُ نکلنا ہوگا

کراچی ،2 مئی2017

پاک سرزمین پارٹی کے پاس ہے جو وژن ہے وہی اس شہر اور ملک میں خوشحالی لیکر آئے گا، مصطفی کمال
ہم نے آج فیصلہ نہیں کیا تو آنے والا وقت ہمارے بچوں کیلئے مشکل اور کٹھن ہوگا،
پی ایس پی بچوں کیلئے تعلیم، اسپتالوں میں ادویات، سستی بجلی اور ٹرانسپورٹ کو جدید نظام چاہتی ہے
مصطفی کمال ووٹ مانگنے کیلئے بلائے تو مت آنا لیکن 14 مئی کو اپنے حقوق کیلئے ضرور نکلیں

چیئرمین پاک سرزمین پارٹی سید مصطفی کمال نے کہاکہ اگر آپ کے پاس کوئی اور آپشن ہے تو آپ ان کے پاس جا کر ان سے اپنے مسائل کو حل کروانے کی بات کریں، پاک سرزمین پارٹی کے پاس ہے جو وژن ہے وہی اس شہر اور ملک میں خوشحالی لیکر آئے گا ، پاک سرزمین پارٹی بچوں کیلئے تعلیم، اسپتالوں میں ادویات، سستی بجلی اور ٹرانسپورٹ کو جدید نظام چاہتی ہے کراچی کے عام شہریوں کے مسائل سے ہٹ کر ایک بات ہمارے مطالبات میں شامل نہیں ہم نے آج فیصلہ نہیں کیا تو آنے والا وقت ہمارے بچوں کیلئے مشکل اور کٹھن ہوگا ، آج اپنے بچوں کے مستقبل کیلئے آواز لگانی ہے اور ملین مارچ کیلئے نکلنا ہے مصطفی کمال ووٹ مانگنے کیلئے بلائے تو مت آنا لیکن 14 مئی کو اپنے حقوق کیلئے ضرور نکلیں ان خیالات اظہار انہوں نے پی ایس پی کے تحت14مئی کے حوالے سے عوامی رابطہ مہم کے سلسلے میں پاک سرزمین پارٹی کے تحت گلشن معمار میں منعقدہ عوامی اجتماع سے خطاب کر تے ہوئے کیااس مو قع پرصدر انیس قائم خانی، سینئر وائس چیئرمین انیس آیڈووکیٹ ڈاکٹر صغیر، وسیم آفتاب اور دیگر رہنما ان کے ہمراہ موجودتھے،انہوں نے کہاکہ مصطفی کمال اور انیس قائم خانی وزیراعظم بننے کیلے پریس کلب پر احتجاج میں نہیں بیٹھے تھے 16 نکات اگر نہیں مانے گئے تو کراچی رہائش کے لایق شہر نہیں رہے گااگر ہمارے مطالبات ہر عمل ہوا تو پورے کراچی میں صاف پانی، سستی بجلی گیس اور بلدیاتی سہولیات فراہم ہوجائیں گی مصطفی کمال کے پاس جادو کی چھڑی نہیں انہوں نے کہاکہ بنارس کا پل بنانے، جزیروں میں پانی پہنچانے اور معمار کی سڑکوں اور اسٹریٹ لائٹس لگوانے اے پہلے تقریریں نہیں کی تھیں آج وہ سڑکیں تباہ حال اور اسٹریٹ لائٹس بند پڑی ہیں انہوں نے کہاکہ ہم نے یہ بھی واضح کیا تھا کہ ہم اپنے کارکنان کے ہاتھوں اور آفس میں پاکستان کے جھنڈے کے علاوہ کسی اور جھنڈے کو آویزاں نہیں کریں گے انہوں نے کہاکہ اس شہر میں اپنے مفادات کو حاصل کرنے کیلئے مہاجروں کو پختونوں، بلوچوں اور دیگر سیاسی جماعتوں سے لڑایا ،علاقوں میں سرحدیں بنی ہوئی تھیں، کٹی پہاڑی لوگ گزرتے ہوئے لوگ سوچتے تھے، لاشیں گرتی تھیں آج ایسا نہیں ہے آج بلوچ، پختون مہاجروں کے علاقوں میں آزادانہ جاتے ہیں،آج بھائی کو بھائی سے لڑوانے والا کوئی نہیں رہا اورپاک سرزمین پارٹی میں مہاجروں، پختون، پنجابی، بلوچی، سرائیکی اور تمام فرقہ کے لوگ شامل ہیں انہوں نے کہاکہ عوام تباہ برباد ہوتے گئے لیکن حکمرانوں کے بینک بیلنس بڑھتے گئے کراچی شہر پورے پاکستان سے آئے ہوئے لوگوں کو پالتا تھا آج یہ شہر کچرے کا ڈھیر، اسکول اسپتال اور سڑکیں تباہ حال ہوچکی ہیں ،باپ اپنے بچوں کو صاف پانی خرید کر پلانے پر مجبور ہے انہوں نے کہاکہ مصطفی کمال آپ کیلئے کچھ نہیں کرسکتا میرے پاس کوئی طاقت نہیں ہے ہم نے وزیر، ایم این اے، ایم پی اے بننے کیلے سیاست شروع نہیں کی انہوں نے کہاکہ 22 کروڑ کی آبادی میں 104 سینیٹرز میں مصطفی کمال بھی ایک سینیٹر تھا،مصطفی کمال کے شادی ہال، پٹرول پمپ اور پلاٹ کیوں نہیں نکلتے ،شادی ہال توڑے جاتے ہیں تو پتا چلتا ہے کسی سیاسی جماعت کے رہنما کا تھا اورجھوٹ بول کر اپنی پارٹی کا دفاع نہیں کرسکتا تھا انہوں نے کہاکہ مصطفی کمال میں اتنی طاقت قدرت نے عطا کی کہ وہ وقت کے فرعون الطاف حسین اور رشوت العباد کے خلاف بات کرسکے الطاف حسین کو مہاجروں، پختون بلوچوں سندھیوں سے کوئی لگاؤ نہیں ہے ،25 ہزار نوجوان قبرستانوں کے سپرد ہیں، انہوں نے کہاکہ کامیابی اور ناکامی اللہ تعالٰی کے ہاتھ میں، میں نے تمام لوگوں کو آپس میں ملانے کی آواز لگائی ہے سہراب گوٹھ اور بنارس کے پختون مشکل میں ہوں اور لیاقت آباد اور اورنگی ٹاؤن خوشحال ہوبعد ازاں سینئر وائس چیئر مین انیس احمد ایڈوکیٹ نے کہاکہ کراچی میں جب لہو بہایا گیا اس میں مہاجرروں سمیت پٹھانوں کا لہو بھی شامل ہے اب اس شہر اور ملک میں مزید قومیتوں کے درمیان لڑائی نہیں ہوگی کیونکہ پاک سرزمین پارٹی نے اپنے قیام سے ہی اس شہر میں بھائی کو بھائی سے ملانے کی جدوجہد کا آغاز کیا وائس چیرمین پاک سرزمین پارٹی وسیم آفتاب نے کہاکہ انہوں نے کہاکہ آج مصطفی کمال ملین مارچ اپنے ذاتی مفادات کیلئے نہیں عوام مسائل کے حل کیلئے کرنے جارہے ہیں اورمصطفی کمال بلاشبہ ایک عظیم انسان ہیں جو عوام کیلے سڑکوں پر نکل رہے ہیں انہون نے کہاکہ مصطفی کمال نے نظامت کے دور میں پارٹی کی مخالفت کے باوجود اس شہر کے تمام علاقوں میں ترقیاتی کاموں کا جال بچھایا اور مصطفی کمال اس شہر اور ملک کے لوگوں کی سنہری صبح کیلے جدوجہد کر رہے ہیں

.

کراچی ،2 مئی2017

سوئی کی چبھن برداشت کرنی پڑے گی تاکہ آیندہ آنے والی نسلوں کی مستقبل روشن ہو، مصطفی کمال
پاک سرزمین پارٹی مزدوروں کے معاشی استحصال پر کبھی خاموش نہیں بیٹھے گی
ریاست کی ذمہ داری ہے کہ وہ ریاست میں رہنے والوں کے ساتھ برابری پر انصاف کرے،مصطفی کمال
امیری غریبی کا فرق مٹے گا تو صرف مزدور نہیں بلکہ ہم سب کی زندگیوں میں بھی نکھار آئے گا

کراچی ( )چیئرمین پاک سرزمین پارٹی سید مصطفی کمال نے کہا ہے کہ مصطفی کمال اپنے عوام کو تکلیف میں ڈال کر پوائنٹ اسکورنگ نہیں کرسکتا، عوام اور ان بچوں کیلئے ہمارے مطالبات ہیں اپنے ذاتی مفادات، پروٹوکول بڑھانے اور کچھ لے اور کچھ دے کیلئے ملین مارچ کی کال نہیں دی اگر چاہیں تو ابھی شاہراہ فیصل کو بلاک کردیں لیکن عوام کو پریشانی میں مبتلا کرکے ان کی بددعا نہیں لینا چاہتا ہمیں سوئی کی چبھن برداشت کرنی پڑے گی تاکہ آیندہ آنے والی نسلوں کی مستقبل روشن ہو، ان خیالات اظہار انہوں نے یکم مئی عالمی یوم مزدور کے موقع پرلیبرفیڈریشن آٖ پاکستان سے خطاب کرتے ہوئے ہوئے کیا، اس مو قع پر صدر پی ایس پی انیس قائم خانی، سیکریٹری جنرل رضا ہارون، نیشنل کونسل کے اراکین، لیبر فیڈریشن کے صدر توقیر احمد، سیکریٹری جنرل عدنان سردار اور دیگر بھی موجود تھے۔. انہوں نے کہاکہ2.5 کروڑ لوگوں کیلے صاف پانی اور دیگر سہولیات مانگنے کیلے ریڈ زون چلے جاتے خبر بنواتے لوگوں کی گرفتاریاں ہوتیں لیکن ہم عوام کو تکلیف میں مبتلا کر آ نہیں چاہتے انہوں نے کہاکہ امیری غریبی کا فرق مٹے گا تو صرف مزدور نہیں بلکہ ہم سے کی زندگیوں میں بھی نکھار آئے گاپاک سرزمین پارٹی مزدوروں کے معاشی استحصال پر کبھی خاموش نہیں بیٹھے گی انہوں نے کہاکہ ہم نے وقت کے فرعونوں کے خلاف آواز لگائی دی یے، قوموں کی نفرتوں کو محبت میں بدل دیا ہے،آئندہ آنے والا وقت ہمارے مزدوروں اور ان کے بچوں کے روشن و تابندہ مستقبل کا ہے، انہون نے کہاکہ مزدور محنت سے اپنا پسینا نکال رہا ہو تو اسے اپنے بچوں کی صحت، تعلیم اور رہائش کا خیال نہ ہو اورریاست کی یہ ذمہ داری ہے کہ وہ ریاست میں رہنے والوں کو برابری ہر انصاف کرے، دنیا کے مہذب ممالک میں مزدور اور امیر طبقے کا علاج ایک ہی اسپتال میں ہوتا ہے جس اسکول میں امیر کا بچہ تعلیم حاصل کرتا اسی اسکول میں اس کے ڈرائیور کو بچہ تعلیم حاصل کرتا ہے انہوں نے کہاکہ ہمارے ملک میں ٹیکس اس لیے نہیں دیاجاتا کیوں کہ حکومت اس ٹیکس سے اپنی جیبیں بھرتی ہے کراچی میں بزرگ پنشن نے ملنے کی وجہ سے سوک سینٹر کی عمارت سے خودکشی کرتے ہیں ایسے حالات میں لوگ ریاست کی نہ اہلی کی وجہ سے لوگ غلط راہ پر چل پڑتے ہیں انہون نے کہاکہ17 ہزار اسکول صوبہ سندھ میں گھوسٹ ہیں،906 ارب اسکولوں اور اسپتالوں پر کاغذات میں خرچ کیے گیے، لیکن 9 آئیڈیل اسکول اور اسپتال موجود نہیں انہوں نے کہاکہ دنیا بھر میں جائیدادیں ہمارے ٹیکس ہمارے بچوں کی تعلیم صحت کے پیسوں سے خریدی جاتی ہیں، انہون نے کہاکہ پاکستان میں گزشتہ ادوار میں سرکاری اسکولوں میں تعلیم کا نظام پرائیویٹ اسکولوں کے مساوی تھا ماضی میں سرکاری اسکولوں سے تعلیم حاصل کرنے والوں نے فوج، عدلیہ، سائنس اور دیگر شعبہ جات میں نمایاں کردار ادا کیا انہون نے کہاکہ محنت کش آج محنت کی زیادتی کی وجہ سے نہیں اپنے بچے کے مستقبل کے بارے سوچ کر بیماری میں مبتلا ہوتا ہے اورمحنت کش کا بچی بیماری میں مبتلا ہوجائے تو وہ اور زیادہ پریشان ہوتا کہ علاج کیسے کروائے اورریاست کی ذمہ داری ہے کہ وہ شہریوں کی تعلیم، صحت اور روزگار کی معیاری سہولیات مہیا کرے.

کراچی ،2 مئی2017

پی ایس پی چیئرمین سید مصطفی کمال اور صدر انیس قائم خانی نے دارلعلوم کراچی کے نائب صدر مفتی تقی عثمانی کے ساتھ ملاقات
مفتی تقی عثمانی کو 14 مئی ملین مارچ میں شرکت کی دعوت دی، مصطفی کمال

کراچی ()پاک سرزمین پارٹی کے چیئرمین سید مصطفی کمال اور صدر انیس قائم خانی نے دارلعلوم کراچی کے نائب صدر مفتی تقی عثمانی کے ساتھ ملاقات، اس موقع پر وائس چیئر مین وسیم آفتاب اور جامع بنوریہ کے مہتمم مفتی نعیم بھی موجود تھے، ملاقات میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی اور اتحاد بین المسلمین کیلئے مفتی تقی عثمانی اور ان کے دیگر رفقاء کے کرادر کو سراہا گیا، سید مصطفی کمال نے مفتی تقی عثمانی کو 14 مئی ملین مارچ میں شرکت کی دعوت دی۔

کراچی ،1مئی2017

پاکستان کے محنت کش طبقے نے نہ صرف اس ملک کی تعمیر و ترقی میں اہم کردار اداکیا، مصطفی کمال
پاک سرزمین پارٹی مزدور بھائیوں سمیت اس ملک لے 18 کروڑ سے زائد عوام کے حقوق کی جنگ لڑ رہی ہے

چیئر پاک سرزمین سید مصطفی کمال نے یکم مئی مزدوروں کے عالمی دن کے موقع پر اپنے بیان میں کہا ہے کہ پاکستان کے محنت کش طبقے نے نہ صرف اس ملک کی تعمیر و ترقی میں اہم کردار ادا کیا بلکہ دنیا بھر سے آج بھی پاکستانی اس ملک میں سرمایہ بھیج کر اس ملک کے زرمبادلہ میں اضافہ کر رہے ہیں اور اس ملک کی معیشت کو مضبوط کرنے اپنا حصہ ڈال رہے ہیں، انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے آج ہمارے ملک میں محنت کش طبقہ غربت کی چکی میں پس رہا ہے اور پینے کے صاف پانی، بجلی، گیس اور تعلیم جیسی بنیادی سہولیات سے اسے محروم رکھا جارہا ہے لیکن پاک سرزمین پارٹی مزدور بھائیوں سمیت اس ملک لے 18 کروڑ سے زائد عوام کے حقوق کی جنگ لڑ رہی ہے اور ہمیں امیدوار ہے کہ ہمارے نیتوں کو دیکھ کر قدرت ہمیں کامیابی سے ہمکنار کرے گی اور وہ وقت دور نہیں جب اس ملک میں طبقاتی نظام کا خاتمہ ہو گا اور امیر و غریب کیلئے ایک قانون ایک تعلیمی نظام ہوگا اور تمام بنیادی وسائل ہر شہری کی دسترس میں ہوں گے.

=====================

 

پاکستان کی تعمیر و ترقی میں مزدور اور محنت کش طبقے کا کرادر انتہاء اہم کردار ہے، توقیر احمد
پاکستان میں مزدوروں کا استحصال تواتر کے ساتھ جاری ہے، صدر پاک سرزمین لیبر فیڈریشن توقیر احمد
ملک کے مزدور و محنت کش طبقے کو پاک سرزمین پارٹی نے ایک پلیٹ فارم مہیا کیا، توقیر احمد

کراچی ( ) یکم مئی محنت کشوں کے علمی دن کے موقع پر پاک سرزمین پارٹی کی لیبر فیڈریشن کے صدرتوقیر احمد نے پاکستان بھر کے مزدور و محنت کش طبقے کو مزدورں کے عالمی دن کے موقع اپنے بیان میں کہا ہے کہ پاکستان کا مزدور اور محنت کش طبقہ پاکستان کی تعمیر و ترقی میں اہم کردار ادا کرتا چلا آرہا ہے لیکن بدقسمتی سے مزدوروں کا استحصال تواتر کے ساتھ جاری ہے 249انہوں نے کہا کہ پاک سرزمین پارٹی کی شکل میں مصطفی کمال اور انیس احمد قائم خانی نے پاکستان بھر کی عوام بالخصوص ملک کے مزدور و محنت کش طبقے کو ایک ایسا پلیٹ فارم مہیا کیا جو حقیقی معنوں میں مزدوروں کے حقوقِ کی ترجمانی کرتا ہے249 پاک سرزمین پارٹی ملک کے مزدور اور محنت کش طبقے کی فلاح و بہبود کیلئے ہر پلیٹ فارم پر آواز میں کرتی رہے گی.